Results 1 to 8 of 8

Thread: لڑکی یا عورت"مکمل کہانی"

  1. #1
    Mind007 is offline Premium Member
    Join Date
    Apr 2016
    Age
    22
    Posts
    57
    Thanks
    24
    Thanked 250 Times in 50 Posts
    Time Online
    18 Hours 40 Minutes 13 Seconds
    Avg. Time Online
    1 Minute 45 Seconds
    Rep Power
    11

    Default لڑکی یا عورت"مکمل کہانی"

    لڑکی یا عورت
    ( یہ کہانی اردو فنڈا فورم پر ہی" تھرسٹی خان" کی پوسٹ ہو چکی ہے۔ میں نے اس کہانی کو صرف رومن سے اردو میں کرنے کی کوشش کی ہے۔ امید ہے کہ کہانی کا رائٹر میری اس کوشش کا برا نہیں منائے گا)
    ہیلو دوستو ! میرا نام عیشا ہے اور میں کراچی سے تعلق رکھتی ہوں یہ کہانی نہیں بلکہ آپ اسے میری آپ بیتی بھی کہہ سکتے ہیں۔ یہ آج سے قریب چار سال پہلے جب میری عمر قریب 20 سال تھی کا واقعہ ہے۔ ہمارے گھر میں امی ابو کے علاوہ ہم چار بہنیں اور ایک بھائی رہتے ہیں۔ میرے بھائی کا نام سلمان ہے۔ بھائی سب بہنوں میں سب سے زیادہ مجھے پیار کرتے تھے۔ ایک طرح سے میں ان کی لاڈلی بہن تھی۔ باقی بہنوں سے بھی کرتے تھے پیار لیکن مجھ سے کچھ زیادہ ہی کرتے تھے
    میں کچھ اپنے بارے میں بتاتی جاؤں۔ میں ان دنوں بہت پیاری، خوبصورت، اور سیکسی فگر کی مالک لڑکی تھی۔ میرا برا سائز 32 تھا لیکن بوبز بیحد ٹائٹ ہونے کی وجہ سے انتہائی دلکش دکھائی دیتے تھے۔۔ میں جب بھی گھر سے باہر نکلتی تو راستے میں لڑکوں کی آنکھیں میرے جسم کے طواف میں لگی رہتی۔ رفتہ رفتہ مجھے انجان نمبروں سے کالز آنا شروع ہوئیں۔ کہ ہم سے دوستی کر لو۔ بلا بلا بلا
    میں جب بھی تیار ہوتی تو سلمان بھائی مجھے بہت پیار کرتے ۔ کبھی کبھی وہ میرے گالوں پر کس بھی کرتے۔۔۔ ان کا لگاتار کس کرنا میری عادت بن گی۔۔ پھر وہ مجھ میں کچھ زیادہ ہی انٹرسٹ لینے لگے۔ میں نے محسوس کیاکہ یہ پیار کسی اور ہی رنگ کا ہے۔میں جب بھی چست لباس پہنتی میرا فگر واضح ہو جاتا۔ اس وقت بھائی مجھے زیادہ قریب بٹھاتے اور پیار کرتے۔پھر جب مجھے محسوس ہوا کہ بھائی کا عشق واقعی ہوس والا ہے تو مجھے بھی کچھ کچھ ہونے لگا
    میں بھی یہ چاہتی تھی کہ کسی دن بھائی مجھے زبردستی کھینچ کر پرائیویٹ کمرے میں لےجا کر مجھے کس کریں، گلے لگائیں،لگاتار بوسوں کی بارش کریں لیکن میں چاہ تو سکتی تھی مگر کچھ کر نہیں سکتی تھی۔
    ایک دن بھائی اپنے کمرے میں انٹرنیٹ استعمال کر رہے تھے مجھے آواز دیکر کہنے لگے عاشی ! مجھے چائے دے جاؤ۔میں جب چائے لیکر ان کے کمرے میں گئی تو سلمان بھائی واش روم گئے ہوئے تھے اور ان کے کمپیوٹر پر کچھ سائٹس منیمائز ہوئی پڑیں تھیں۔ میں نے جلدی میں ایک براوزر کو اوپن کیا تو اس میں ایک پورن سائٹ اوپن تھی جس میں ایک جوان لڑکا خوبصورت بدن کی حسینہ کے ساتھ سیکس کر رہا تھا۔ میں گھبرا گئی اور جلدی جلدی سے اس سائٹ کا نام دیکھ کر سائٹ کو دوبارہ اسی حالت میں منیمائز کر دیا۔پھر جلدی سے واپس ہو گئی۔
    میرے کمرے میں بھی کمپیوٹر تھا اور انٹرنیٹ کی سہولت بھی موجود تھی۔ اب میں رات کا بڑی شدت سے انتظار کرنے لگی۔ آخر جب رات ہوئی سب کھانا کھا کر لاونج میں چائے پینے کے لیے بیٹھے۔ سب خوش گپیاں لگا رہے تھے لیکن میرا دماغ کسی اور جانب مگن تھا۔ سب نے میری بے دھیانی کو محسوس کیا لیکن کوئی خاص توجہ نا دی۔ چائے پی کر سب اپنے اپنے کمروں کی جانب چل دئیے جبکہ میں ابھی بھی وہیں ساکت بیٹھی تھی۔ اچانک سلمان بھائی کسی کام سے لاونج کی طرف آئے تو مجھے وہاں اکیلا پا کر میرے پاس آ گئے۔ میرا سر اپنی گود میں رکھ کر مجھ سے باتیں کرنے لگے۔ کبھی میرے بالوں میں اپنے ہاتھوں سے مساج کرنے لگتے اور کبھی میرے بازوں کو اپنے ہاتھوں سے حدت پہنچانے کی ناکام کوشش کرتے۔ میرا بدن اندر سے دہک رہا تھا
    پھر سلمان بھائی مجھے میرے کمرے میں جا کر سونے کا بول کر چلے گئے۔ میں کمرے میں پہنچی اور اپنے کمرے کو لاک کر کے جلدی سے کمپیوٹر کو آن کیا۔ مطلوبہ ویب سائٹ تک پہنچنے میں مجھے چند سیکنڈ ہی لگے۔ سائٹ پر موجود لنک کو کلک کرنے سے میرے سامنے پکچر گیلری اوپن ہوئی اس میں بے شمار ننگی تصویریں تھیں۔ میں ایک ایک کر کے تصویروں کو دیکھنے لگی۔ مجھے بے چینی سی محسوس ہونے لگی۔ میں ہاٹ ہو رہی تھی۔ میرا جسم کپکپانے لگا، میرے جنسی خواہش بیدار ہونے لگی۔ میں نے دوسرے لنک پر کلک کیا تو وہاں ویڈیوز موجود تھیں۔ایک ویڈیو میں ایک لڑکی بیڈ پر لیٹی ہوئی تھی اور ایک لڑکا اس کی ٹانگوں کو کندھوں پر رکھے اس کے ساتھ سیکس کر رہا تھا۔ ہیڈ فون لگا کر جب میں نے والیم تھوڑا اپ کیا تو لڑکی کی سسکیاں مجھے مزید بےچین کرنے لگیں
    میری پینٹی گیلی ہو چکی ہوئی تھی میں شیدت سے تڑپنے لگی۔ میرا دل چاہا کہ کاش ابھی بھائی آ جائیں اور میرا ریپ ہی کر دیں۔ میں نے فورا ہی اپنے سارے کپڑے اتار دئیے اور میرا ہاتھ خود بخود میری چوت کی جانب چل دیا۔ اپنے ہاتھوں سے ہی اپنی نازک چوت کو سہلاتے سہلاتے میری فنگر اس کی لبوں کے اندر سے باہر کا سفر طے کرنے لگی۔ میں مزے کی بلندیوں پر پہنچ چکی تھی۔ اک نشہ سا تھا جو مجھ پر طاری ہو چکا تھا۔ اسی نشے میں مدہوش میری فنگر نے اپنی سپیڈ میں شدت لا کر میری چوت سے پہلی مرتبہ سفید سیال مائع باہر آیا۔ جس سے میں اس ہیجانی کیفیت سے کچھ حد تک باہر آ چکی تھی۔ میں بے حد پرسکوں تھی۔ پھر میں سونے کے لیے ایسے ہی لیٹ گئی۔
    صبح آنکھ کھلی تو میری آنکھوں کے سامنے رات کے سارے سین ایک ایک کر کے منڈلانے لگے۔ اس سے قبل کہ میں کچھ کرتی امی نے مجھے آوازیں دینا شروع کر دیں۔ بادل نخواستہ مجھے اٹھ کر امی کے پاس جانا پڑا۔ سارا دن وہی روٹین کی لائف گزار کر میں جب شام سر شام ہی اپنے کمرے کی جانب جانے لگی تو میری امی نے مجھے کسی کام سے میری بہن کے ساتھ بازار جانے کا بولا۔ میں بازار کو چل دی۔ آج راستے میں آوارہ لڑکوں کا دیکھنا مجھے بیحد اچھا لگ رہا تھا۔ میری نظر ان کی وجاہت پر کم اور ان کی ہوس زدہ آنکھوں پر زیادہ تھی۔ اتنے میں چھوٹی بہن نے اپنا کام مکمل کر لیا اور مجھے اس کے ساتھ گھر واپس آنا پڑا۔
    رات کا کھانا کھا کر میں اپنے کمرے میں پہنچی ۔ دوسری جانب بھائی اپنے کمرے میں کمپیوٹر پر کام کرتے ہوئے مجھے چائے لانے کے لیے آواز دی۔ میں اچھی طرح جانتی تھی کہ بھائی اس وقت کونسا کام کر رہے ہیں۔ جیسے ہی میں چائے لیکر کمرے میں گئی تو بھائی نے جلدی سے تمام براوزرز کو منی مائز کر دیا۔ میں نے بھائی سے پوچھا کہ بھائی ایسا کونسا کام ہے جو میرے آنے پر بند کر دیا۔بھائی نے جواب دیا کہ ایسا کچھ بھی نہیں ہے تم چائے رکھ کر باہر جاؤ۔
    میں پھر بولی کہ بھائی اگر ایسا ویسا کچھ بھی نہیں تو پھر مجھے بھی آج آپ کا کام دیکھنا ہے اور میں نے ماؤس پکڑ کر ان سائٹس کو دوبارہ اوپن کر دیا۔ اس سائٹ پر تو ایک ہاٹ مووی چل رہی تھی۔ ٹرپل ایکس مووی۔ جس میں ایک کالا گوری عورت کو چود رہا تھا۔ بھائی اس آفت پر گھبرا گیا اور فورا سائٹ کو بند کر دیا۔ میں کپ ٹیبل پر رکھ کر باہر چل دی۔
    کچھ دیر بعد بھائی کمرے سے باہر آئے اس کے چہرے پر 12 بجے ہوئے تھے۔ میرے پاس آ کر منمنانے لگا کہ پلیز جو کچھ بھی تم نے دیکھا ہے اسے کسی اور کو مت بتانا نہیں تو میرا ستیا ناس ہو جاۓ گا۔ میں نے کہا کہ اوکے۔۔۔۔ میں نہیں بتاؤں گی۔
    لیکن میرے جسم میں بھی آگ لگی ہوئی تھی۔ سارا دن بھائی میری چمچہ گیری میں مصروف رہا۔ مجھے بازار سے مختلف کھانے پینے کی چیزیں لا کر کھلاتا رہا۔ میرا موڈ آف ہوتا تو مجھے ہنسانے کے لیے کسی بھی حد سے گزرتا چلا گیا۔ میں کسی حڈ تک نامل ہو چکی تھی بھائی بھی سمجھ گیا کہ اب میں کسی کو نہیں بتاؤں گی۔
    پھر میں بھائی کو تنگ کرنے لگی کہ بھائی ویسے وہ سب کیا ہو رہا تھا؟ پھر ہنسنے لگتی
    بھائی کہتے کچھ نہیں ہو رہا تھا۔۔۔۔۔
    رات میں میں کھانا کھانے کے بعد ہی اپنے کمرے میں چلی گئی۔ کچھ دیر ٹی وی دیکھتی رہی اس کے بعد رات گئے جب میں کمپیوٹر آن کر کے بیٹھی تو پھر میرا وہی حال ہونے لگا۔میں نے کچھ دیر سیکسی سائٹس کا وزٹ کیا اور فنگر کی مدد سے خود کو ریلیز کیا۔ پھر کمرے کا لاک کھول کر لیٹ گئی۔ لاک اس لیے کھولا کہ امی لاک لگا کر سونے نہیں دیتی کہ ایسا کرنا مناسب نہیں۔ کیونکہ بعض اوقات طبعیت ہی خراب ہو سکتی ہے یا کچھ اور مسلہ ۔ لاک ہونے کی وجہ سے مشکل کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔
    میں اپنے بیڈ پر لیٹی اور لیٹتے ہی نیند آ گئی۔کچھ دیر بعد مجھے محسوس ہوا کہ میرے بستر پر میرے علاوہ کوئی اور بھی ہے۔ میں ڈر گئی لیکن بغیر آواز نکالے چپ چاپ لیٹی رہی۔ پھر کسی کے ہاتھ میرے بدن کو چھوئے اور مجھے کمر کے بل سے سیدھا لٹایا۔ میں نے ان کھولی آنکھوں سے دیکھا کہ بھائی میرے بستر میں میرے کمبل میں میرے ساتھ لیٹا ہوا تھا۔
    بھائی نے مجھے نیند میں سمجھا اور میرے بوبز کو سہلانے کے ساتھ ساتھ میرے ہونٹوں کو کس کرنے لگا۔ مجھے شرم بھی آ رہی تھی اور اچھا محسوس بھی ہو رہا تھا۔ میں نے آنکھ کھولی ۔بھائی کو بھی پتا چل گیا کہ مجھے سب معلوم ہو چکا ہے۔ میں نے پوچھا کہ یہ سب کیا ہو رہا ہے تو بھائی نے ہونٹوں پر انگلی رکھتے ہوئے کہا کہ کسی کو بتانا مت اس کے بارے میں۔۔۔۔۔۔۔
    میں نے کہا بھائی! یہ سب غلط ہے۔آپ پلیز یہاں سے چلے جائیں۔ بھائی نے کہا کہ عاشی پلیز ۔۔۔ میں کیا کر رہا ہوں۔۔۔ صرف تم سے پیار ۔۔۔ یہ تو میں اکثر پہلے بھی کرتا رہتا ہوں۔ آج اس میں کیا برائی ہے۔ کسی کو بتانا مت پلیززززز
    میں کروٹ لیکر بھائی کی طرف پیٹھ کر کے لیٹ گئی۔بھائی سے کچھ بھی نا کہہ سکی۔ بھائینے مجھے میری گردن پر کس کیا میرے کچھ نا بولنے پر بھائی کی ہمے اور بڑھی اور وہ میرے مزید ساتھ چپک کر لگ گیا اور اپنا ہاتھ میرے بوبز پر بھیرنے لگا۔ تب تک میں گرم ہو چکی تھی۔ میں منہ سے دبی دبی سسکیاں نکلنے لگیں میں نے بھرپور کوشش کی کہ بھائی کو اس کا علم نا ہو سکے۔ بھائی نےمیرے پورے جسم پر ہاتھ پھیرنا سروع کر دیا ہاتھ پھیرتے پھیرتے بھائی نے اپنا ہاتھ میری چوت کی جانب لے جانا چاہا تو میں نے بھائی کا ہاتھ پکڑ کر روک دیا۔ کہ انہیں جو کچھ ھی کرنا ہے وہ صرف اوپر اوپر سے ہی کریں۔ پھر انہوں نے میری گانڈ پر اپنے ہاتھ پھیرنا شروع کر دئیے اور میری شلوار کو نیچے کھسکا دیا۔ میں نے پھر ان کے ہاتھ روک دئیے۔لیکن بھائی نے بھی کوئی زبردستی نہیں کی اور مجھے سیدھا کر کے میرے اوپر ہی لیٹ گئے،میرے بوبز پر کسسز کرتے گئے۔ پھر کہنے لگے عاشی ! آئی لو یو۔۔ پھر اس طرح میرے اوپر اپنا بدن پھیرنے لگے جیسے مجھے چود رہے ہوں۔ کچھ دیر بعد مجھے محسوس ہوا کہ جیسے بھائی ڈسچارج ہو چکے ہوئے ہوں۔ ان کا ٹراؤزر گیلا ہو چکا تھا ایسے ہی میری شلوار پر بھی نمی محسوس ہونے لگی۔ پھر وہ میرے اوپر سے اٹھے اور کھڑے ہو کر کہنے لگے
    عاشی! تھینک یو
    میں بولی بھائی آپ یہ کنفرم کریں کہ آُ میرے بھائی ہیں یا میرے بوائے فرینڈ؟ آپ نے ایسا کیوں کیا؟
    کہنے لگے عاشی ! تم جانتی ہو کہ میں بھی جوان ہوں اور تم بھی۔ یہ سیکس ایک فطری عمل ہے یہ نا تم نے ایجاد کیا ہے اور نا میں نے۔۔۔ تم بتاؤ جب تک شادی نہیں ہوتی ہم کیا کریں؟تم خود بتاؤ عاشی ! کیا تمہارا یہ سب کرنے کو دل نہیں چاہتا؟میں خاموش رہی
    بھائی بولے عاشی ! شرماؤ مت۔۔۔ مجھے اپنا دوست سمجھو ۔۔ مجھے بتاؤ کہ کیا تمہارا دل نہیں چاہتا کہ کوئی تمہیں اس طرح کرئے؟
    میں نے اثبات میں گردن ہی ہلائی تو وہ ایک دم سے خوش ہو گئے۔ کہنے لگے کہ اسی لیے کہتا ہوں عاشی! جب تک تمہاری شادی نہیں ہو جاتی تب تک اگر تم چاہو تو ہم ایک دوسرے کی جسمانی ضروریات کو بھی پورا کر لیا کریں گے۔۔۔۔
    میں خاموش رہی
    میری خاموشی کو دیکھتے ہوئے بھائی بولا۔۔ پلیز عاشی بولو بھی
    میں شرماتے ہوئے بولی: بھائی ایسا کرنے سے اگر کوئی پرابلم ہو گئی تو؟
    بھائی: کیسی پرابلم عاشی۔۔۔
    میں خاموش
    بھائی: عاشی بولو بھی نا پلیز
    میں: بھائی اگر میں کبھی پریگنٹ ہو گئی تو ۔۔۔۔
    بھائی: ایسا کبھی نہیں ہو گا۔۔ تم نے مجھے پاگل سمجھا ہوا ہے؟ مجھے اس بارے میں کافی معلومات ہیں۔
    اب یہ تم پر ہے کہ ہم ایک دوسرے کی ضروریات کو پورا کریں یا نہیں۔۔۔
    بالاخر میں نے ہاں کر دی۔۔ اس پر بھائی خوشی سے پھولا نا سمایا اور مجھے بانہوں میں لیکر جھومنے لگا۔۔۔ اس نے مجھے پے در پے کس کرنا شروع کر دیا۔ مجھے بیڈ پر بٹھا کر میری کرتی کے بٹن کھولنے لگا اور میں ٹائٹ بوبز کو اپنے کڑیل ہاتھوں سے مسلنے لگا۔ میری سسکیاں نکلنے لگیں۔۔ بھائی نے مجھے تھوڑا اوپر کر کے میری کرتی اتار کر بیڈ پر رکھی اور میرے بوبز کو چومنے لگا۔ میں مزے سے بے حال ہونے لگ پڑی۔ میری تو جیسے جان ہی نکلنے لگی تھی۔ بھائی نے پھر میری برا اتار کر میرے دودھیا مموں کو آزاد کر دیا
    میرے گورے دودھیا مموں کو دیکھ کر بھائی تو جیسے پاگل ہو گیا۔ اور انتہائی وحشیانہ انداز میں ان پر ٹوٹ پڑا۔ بھئی کی بوبز پر ہلکی ہلکی بائٹنگ نے تو مجھے مرنے والا کر دیا تھا۔ میں آوٹ آف کنٹرول ہونے لگی تھی۔ اسی موقع کا فائدہ اٹھاتے ہوئے میرے بھائی نے میری شلوار کو ایک ہی جھٹکے میں اتار دیا اور میری کنواری اور گلابی چوت کے لبوں کو اپنے ہاتھوں سے سہلانے لگے۔ اپنی انگلی انہوں نے میری چوت میں ڈال دی۔میری سسکیاں بے قابو ہونے لگیں۔
    بھائی نے بھی اپنے کپڑے اتارے اور میرے اوپر آ کر لیٹ گیا۔انہوں نے اپنا لنڈ میری نازک چوت کے لبوں پر رگڑنا شروع کیا ۔
    میں بن پانی کی مچھلی کی طرح تڑپنے لگی۔ اچانک ہی میرے بھائی نے ایک جھٹکے کے ساتھ پورے کا پورا لنڈ میری نرم و نازک چوت میں گھسیڑ دیا۔ میری چیخیں بلند ہونے سے پہلے ہی بھائی نے میرے ہونٹ اپنے مظبوط ہونٹوں میں قید کر لیے۔ میرا درد کی شدت سے برا حال ہو چکا تھا۔
    میں آنکھوں کے اشاروں سے بھائی کو اسے باہر نکالنے کا بول رہی تھی۔ تبھی بھائی نے اسے باہر نکال لیا۔ مجھے سکون کا سانس آیا۔ بھائی اٹھ کر ڈریسنگ ٹیبل سے کولڈ کریم پکڑی اور اسے اپنے لنڈ پر اچھی طرح لگا کر کچھ کریم میری چوت کے اندر بھی لگائی۔
    اس کے بعد بھائی نے آہستہ آہستہ اپنا لنڈ میرے چوت کے اندر دوبارہ ڈالنا شروع کیا۔ تھوڑی دیر اندر باہر کرنے کے بعد نہوں نے ایک دم ہی سارے کا سارا میری چوت کے اندر ڈال دیا۔ اس جھٹکے کے ساتھ ہی میری چیخ نکل گئی۔ بھائی سہم کر رک گیا اور آہستہ سے بولا ۔۔ عاشی ! پلیز تھوڑا درد برداشت کر لو۔ ابتدا کا درد اور اس کے بعد کے شدید مزوں کی امید پر میں ساتھ دینے لگی۔
    بھائی سپیڈ سے اندر باہر کرنے لگے۔ میں مزے کی بلندیوں پر تھی۔ میں نے بھائی کو گلے لگایا اور بھائی کے جھٹکوں کو انجوائے کرنے لگی۔ کچھ ٹائم کے بعد میں ڈسچارج ہونے لگی۔ میرا جسم جھٹکے کھانے لگا۔ اور میری چوت کا پانی بیڈ کی چادر پر گر گیا۔
    کچھ دیر کے بعد بھائی بھی ڈسچارج ہونے لگا اور اس نے لنڈ میری چوت سے نکال کر میرے پیٹ اور میرے ٹانگوں پر اپنا پانی نکال لیا۔
    تھکاوٹ کی وجہ سے بھائی میرے پیٹ پر ہی لیٹ گئے اور مجھے کس کرنے لگے۔ کچھ دیر کے بعد بھائی نے اٹھ کر سائیڈ تیبل سے ٹشو پکڑ کر میرا جسم صاف کیا۔ پھر ہم نے کپڑے پہن کر کھڑے ہوئے۔ بھائی نے مجھ سے پوچھا کہ عاشی بولو مزہ آیا؟ میں خاموش رہی۔۔ بھائی نے پھر پوچھا بولو عاشی تمہیں مزہ آیا یا نہیں؟ میں نے جواب دیا کہ بھائی آج ہی تو مزے کی حقیقت کو سمجھا ہے۔
    جاتے ہوئے بھائی نے زور کی ایک جپھی دی اور کہنے لگے میں میں کل پھر اپنی عاشی جان کے پاس آؤں گا تو میں نے بھی اثبات میں اپنا سر ہلا دیا۔ اس کے بعد ہم بہن بھائیوں نے لگاتار متعدد بار سیکس لائف کو انجوائے کیا۔ میں اپنے بھائی کی بیوی کی طرح ہی بن چکی تھی ان کی ہر ضرورت کا خیال رکھنا میرے بہترین مشاغل میں شامل ہو چکا تھا۔ پھر ہم کس کس طرح سے سیکس کو انجوائے کرتے رہے
    یہ کہانی پھر سہی۔۔۔
    Last edited by Story-Maker; 04-01-2018 at 08:34 PM.

  2. The Following 9 Users Say Thank You to Mind007 For This Useful Post:

    abkhan_70 (03-01-2018), farhan9090 (08-01-2018), jerryplay100 (07-01-2018), Lovelymale (05-01-2018), mussha (Today), omar69in (07-01-2018), shubi (10-01-2018), Story-Maker (04-01-2018), teno ki? (04-01-2018)

  3. #2
    teno ki? is offline Premium Member
    Join Date
    Feb 2012
    Posts
    317
    Thanks
    391
    Thanked 536 Times in 231 Posts
    Time Online
    1 Week 3 Days 2 Hours 44 Minutes 6 Seconds
    Avg. Time Online
    6 Minutes 43 Seconds
    Rep Power
    39

    Default

    بہترین کاوش
    بہت شکریہ دوست
    کچھ کام ادھورہ چھوڑا ہے آپ نے پلیز ان پہ بھی توجہ دیں

  4. The Following 2 Users Say Thank You to teno ki? For This Useful Post:

    abkhan_70 (04-01-2018), Mind007 (04-01-2018)

  5. #3
    Mind007 is offline Premium Member
    Join Date
    Apr 2016
    Age
    22
    Posts
    57
    Thanks
    24
    Thanked 250 Times in 50 Posts
    Time Online
    18 Hours 40 Minutes 13 Seconds
    Avg. Time Online
    1 Minute 45 Seconds
    Rep Power
    11

    Default

    برادر ! ادھورا بالکل نہیں ۔ روٹین لائف میں کچھ نا کچھ وقت اسے لازم ملتا ہے روزانہ کی بنیاد پر۔ وہ بھی جلد مکمل ہو گا۔

  6. The Following 2 Users Say Thank You to Mind007 For This Useful Post:

    jerryplay100 (07-01-2018), teno ki? (05-01-2018)

  7. #4
    teno ki? is offline Premium Member
    Join Date
    Feb 2012
    Posts
    317
    Thanks
    391
    Thanked 536 Times in 231 Posts
    Time Online
    1 Week 3 Days 2 Hours 44 Minutes 6 Seconds
    Avg. Time Online
    6 Minutes 43 Seconds
    Rep Power
    39

    Default

    Quote Originally Posted by Mind007 View Post
    برادر ! ادھورا بالکل نہیں ۔ روٹین لائف میں کچھ نا کچھ وقت اسے لازم ملتا ہے روزانہ کی بنیاد پر۔ وہ بھی جلد مکمل ہو گا۔
    ترتیب اچھی ہوتی ہے
    مزہ بھی رہتا ہے

  8. The Following User Says Thank You to teno ki? For This Useful Post:

    abkhan_70 (05-01-2018)

  9. #5
    jerryplay100's Avatar
    jerryplay100 is offline Premium Member
    Join Date
    Jan 2012
    Posts
    418
    Thanks
    3,062
    Thanked 1,227 Times in 353 Posts
    Time Online
    1 Week 17 Hours 44 Minutes 25 Seconds
    Avg. Time Online
    5 Minutes 5 Seconds
    Rep Power
    79

    Default

    good job.......

  10. The Following User Says Thank You to jerryplay100 For This Useful Post:

    omar69in (07-01-2018)

  11. #6
    rana arshad is offline Premium Member
    Join Date
    Mar 2016
    Age
    23
    Posts
    78
    Thanks
    1
    Thanked 81 Times in 44 Posts
    Time Online
    3 Days 8 Hours 31 Minutes 42 Seconds
    Avg. Time Online
    7 Minutes 12 Seconds
    Rep Power
    10

    Default

    plz coninue

  12. The Following User Says Thank You to rana arshad For This Useful Post:

    junaidkhan00 (08-01-2018)

  13. #7
    junaidkhan00's Avatar
    junaidkhan00 is offline Aam log
    Join Date
    Mar 2014
    Location
    lahore
    Age
    29
    Posts
    29
    Thanks
    14
    Thanked 41 Times in 18 Posts
    Time Online
    5 Hours 34 Minutes 7 Seconds
    Avg. Time Online
    14 Seconds
    Rep Power
    7

    Default

    thanks for sharing these words....bht kamal hai but update yeh silsila agay chalna chahye

  14. #8
    zeeshi100 is offline Premium Member
    Join Date
    Apr 2009
    Posts
    66
    Thanks
    4
    Thanked 154 Times in 46 Posts
    Time Online
    1 Day 12 Hours 38 Minutes 44 Seconds
    Avg. Time Online
    59 Seconds
    Rep Power
    16

    Default

    Kafi din guzar Gaye Hain koi update nahi hai

Bookmarks

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •