Page 1 of 13 1234511 ... LastLast
Results 1 to 10 of 127

Thread: (سرفروش 3 (مشن اسرائیل

  1. #1
    hard.target's Avatar
    hard.target is online now Premium Member
    Join Date
    Dec 2013
    Location
    Pakistan , India , UAE , Korea , Taiwan
    Posts
    268
    Thanks
    278
    Thanked 1,455 Times in 244 Posts
    Time Online
    5 Days 18 Hours 26 Minutes 27 Seconds
    Avg. Time Online
    5 Minutes 2 Seconds
    Rep Power
    991

    Default (سرفروش 3 (مشن اسرائیل

    سرفروش 3 (مشن اسرائیل )

    ٭ وطن سے دور لڑا جانے والا ایک اور یادگار معرکہ ، جہاں زندگی موت کے تعاقب میں تھی ۔

    ٭ وطن کی محبت اور انتقام کے جذبے نے اسے ناقابل شکست بنا دیا تھا ، وہ جان لٹانے کی ہر کوشش میں تھا۔

    ٭ یمام ۔ اسرائیل کی بارڈر فورس ۔۔ جس کے حصار کو تہس نہس کرتا ہوا وہ اسرائیل میں داخل ہوا ۔۔

    ٭ جنرل ہارزی حالوی ۔ ملٹری انٹیلی جنس کا چیف ۔ جس سرپھرے کی تلاش پورے اسرائیل میں کر رہا تھا وہ اس کے اپنے گھر میں موجود تھا ۔۔

    لیڈی بلیک ۔۔ موساد کی اسپیشل ایجنٹ ۔۔ جسے خاص اسے مردہ یا زندہ پکڑنے کے لئے بلایا گیا ۔۔ اور پھر جب دونوں کا آمنا سامنا ہوا ۔۔۔


    ٭ عقاب ۔ پاکیشیا کا فارن ایجنٹ ، موت کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر مسکرانے والا ، جس کی بہادری نے راجہ کو بھی ششدر کر دیا۔

    ٭ اسرائیل کی ہر کوشش خاک میں ملتی رہی اور وہ ہر اہم عمارت پر اپنی فتح کا نشان گاڑتا رہا ۔۔۔

    ٭فاریہ ۔ عرب دوشیزہ جو فلسطین کی تحریک آزادی میں پیش پیش تھی ، ، اور اب تینوں ایک ہی مشن میں اکھٹے تھے۔۔

    ٭ آخر زندگی کو ہار ماننا پڑی ۔ اور صحرا میں گولیوں کی بارش نے اسے زمین بوس کر دیا ، موت اس سے چند قدم کے فاصلے پر ۔۔۔۔

    ٭ آخر اسرائیل نے اس سرپھرے کے آگے اپنی ہار مانی اور ایکسٹو سے اسے واپس بلوانے کے لئے فون کرنے لگا۔۔۔

    ٭ ہر لمحہ ایکشن ۔۔ اور آتش و بارود سے بھرپور ۔۔۔۔
    Last edited by hard.target; 28-06-2017 at 12:20 AM.
    THE DEVIL WHISPERS YOU CANT WITHSTAND THE STORM

    MY REPLIED , TAKE A SIDE , "I AM THE STORM"

  2. The Following 16 Users Say Thank You to hard.target For This Useful Post:

    abkhan_70 (28-06-2017), Admin (13-12-2017), anjumshahzad (28-06-2017), farhan9090 (10-01-2018), katita (28-06-2017), Leonard (28-06-2017), Lovelymale (29-06-2017), mbilal_1 (28-06-2017), mentor (28-06-2017), panjabikhan (29-06-2017), Rana Tanha (27-06-2017), ruldguld123 (29-06-2017), shubi (08-07-2017), Story-Maker (29-06-2017), suhail502 (02-07-2017), teno ki? (28-06-2017)

  3. #2
    mbilal_1's Avatar
    mbilal_1 is offline Chief Executive
    Join Date
    Apr 2011
    Location
    Lahore
    Posts
    348
    Thanks
    2,453
    Thanked 1,056 Times in 306 Posts
    Time Online
    1 Week 3 Days 1 Hour 34 Minutes 37 Seconds
    Avg. Time Online
    6 Minutes 8 Seconds
    Rep Power
    337

    Default

    Welcome Cheetay..
    Shiddat se intzaar hai aap k dhamaky ka.
    Khush rahein aur likhty rahein..

  4. The Following 3 Users Say Thank You to mbilal_1 For This Useful Post:

    hard.target (28-06-2017), ruldguld123 (29-06-2017), suhail502 (02-07-2017)

  5. #3
    hard.target's Avatar
    hard.target is online now Premium Member
    Join Date
    Dec 2013
    Location
    Pakistan , India , UAE , Korea , Taiwan
    Posts
    268
    Thanks
    278
    Thanked 1,455 Times in 244 Posts
    Time Online
    5 Days 18 Hours 26 Minutes 27 Seconds
    Avg. Time Online
    5 Minutes 2 Seconds
    Rep Power
    991

    Default

    قسط نمبر 1 ۔۔

    رات کے 9 بجے کا وقت تھا ۔ ڈائننگ ٹیبل سجی ہوئی تھی ۔۔جہاں اسرائیلی فوج کے تمام بڑے افسران جمع تھے ۔۔۔ یہ سب بارڈر کی اسپیشل فورس یمام کے بڑے جنرلز تھے ۔۔اور سامنے ایک مین کرسی پر جنرل ہارزی حالوی بیٹھا خاموشی سے کھانا کھا رہا تھا۔۔ ۔۔ آج اس کا بارڈر کا دورہ اور جنرل سے میٹنگ تھی ۔۔۔جس کے آخر میں وہ اب ڈنر پر بیٹھا ہوا تھا۔۔۔۔۔ کچھ ہی دیر میں کھانا ختم ہوا اور وہ سلیوٹ کی آوازوں میں چلتا ہوا اپنے کمرے کی طرف آنے لگا۔۔۔۔۔بارڈر فورس کا سیکورٹی انچارج جنرل حیفی اس کے پیچھے پیچھے چل رہا تھا۔۔۔ کمرے کے دروازے پر الوداعی سلیوٹ اور اند ر کا اشارہ کرتے ہوئے جنرل حیفی رک گیا ۔۔۔۔اور دروازہ بند ہونے کا انتظار کرنے لگا۔۔۔جنرل ہارزی نے اندر داخل ہو کر دروازہ بند کرد یا ۔۔۔۔سامنے ہی اس کی امید کے مطابق منظر تھا۔۔۔۔۔۔ یہ ایک عرب دوشیزہ تھی۔۔۔ دونوں ہاتھ پیچھے باندھ کر منہ پر ٹیپ چپکائی ہوئی تھی۔۔۔۔چہرے کی سرخ اور نقش اس کے مزاج کی گرمی اور تیزی کو ظاہر کررہے تھے ۔اس کے جسم کا نشیب و فراز سینے کی حرکت کے ساتھ واضح ہو رہےتھے۔۔۔جوانی میں قدم رکھنے والی یہ دوشیزہ قریبی گاؤں سے کل رات ہی اغوا کی گئی تھی۔۔۔۔۔جنرل نے دلچسپ نگاہوں سے اسے دیکھا ۔۔۔اور اپنی شرٹ کے بٹن کھولنے لگا۔۔۔۔ساتھ ہی فریج سے بوتل نکالنے کے بعد سائیڈ ٹیبل پر رکھ دی ۔۔۔۔اپنے اوپری بدن کو عریاں کرنے کے بعد وہ لڑکی کی طرف بڑھا ۔۔۔۔۔اور اسے گود میں اٹھا کر بیڈکی طرف لایا اور اچھال دیا۔۔۔لڑکی کے بند منہ سے مم ۔اوں کی مدھم آواز نکلی ۔۔۔۔جنرل اب اس کے اوپر آتے ہوئے اس کے منہ سے ٹیپ اتارنے لگا۔۔۔۔۔۔۔ٹیپ اتارتے ہی لڑکی نے ایک تیز سانس کھینچی اور اگلے ہی لمحے اس کے منہ سے بے تحاشہ گالیاں نکلنے لگیں۔۔۔۔جنرل کا بھار ی ہاتھ اس کے منہ پر آن جما ۔۔۔۔ناک اور منہ دونوں بند کئے گئے تھے ۔۔۔۔۔لڑکی کسمسانے لگی ۔۔۔جنرل نے اپنی بھاری آواز میں اسے چپ کرنے کا کہا۔۔۔۔اور ساتھ ہی ٹیبل پر سے شراب کے گلاس کو پکڑکے کے لڑکی پر گرانے لگا۔۔۔۔لڑکی پھر سے تڑپی تھی ۔۔۔۔مگر ہاتھ پاؤں سے بندھے ہونے کی وجہ سے مجبور تھی ۔۔۔۔کچھ ہی دیر میں شراب نے اس کے اوپر ی بدن کو گیلا کر دیا۔۔۔۔اس کے سینے کے ابھار مزید واضح ہو گئے ۔۔۔جنرل نے اب اس کے چہرے سے ہاتھ ہٹاتے ہوئے لڑکی کے منہ میں بھی شراب انڈیلنی شروع کردی تھی ۔۔۔لڑکی کی ساری مزاحمتیں دم توڑ رہی تھی ۔۔۔۔چہرے کی سرخی بڑھ رہی تھی۔۔۔۔جنرل آدھی بوتل اس کے اوپر ۔اور آدھی اس کے اندر ڈال کرپہنچا کر اب پیچھے ہٹ گیا۔۔۔لڑکی اب بھی مزاحمت پر تھی ۔۔۔۔۔مگر پہلے سے کافی حد تک کم ۔۔۔۔جنرل نے لڑکی کی ٹانگوں پر بندھی ہوئی بیلٹ کھول لی ۔۔۔۔۔اور نچلے بدن کو کپڑوں سے آزاد کرنے لگا۔۔۔۔۔لڑکی کی سفید ریشمی رانیں اب عریاں تھیں۔۔۔۔۔۔لڑکی کی ٹانگوں کو پھیلاتے ہوئے وہ درمیان میں آیا ۔۔۔اور لڑکی کے اوپر بدن پر موجود کپڑے کو بھی ایک جھٹکے سے کھینچ دیا ۔۔۔۔۔چر ر کی آواز کے ساتھ اس کے سینے کے ابھار اٹھے ۔۔۔اور اوپر کی طرف آئے جنرل نے دونوں ہاتھ اس کےابھاروں پر رکھتے ہوئے دباؤ دینے لگا۔۔۔۔۔لڑکی اب بھی کسی قدر ہوش میں تھی۔۔۔اسے محسوس ہو رہا تھا کہ یہ سب کیا ہورہا ہے ۔۔۔مگر نشےسے بند ہوتیں آنکھیں اسے کچھ کرنے نہیں دے رہیں تھیں۔۔۔۔۔جنرل ندیدے پن کی طرح اس کے سینےکے ابھاروں پر تھپڑ مار رہا تھا ۔۔۔۔نپلز کو کھینچ کھینچ کر لمبا کر رہا تھا۔۔۔۔لڑکی کے منہ سے نکلنے والی کراہوں کی اسے کوئی فکر نہیں تھی ۔۔۔۔اب وہ ایک ہاتھ نیچے لے جا کر اپنی پینٹ نیچے کرنے لگا۔۔۔زپ کھول کر اس نے لن کو باہر نکالا ۔۔۔جو تیزی سے لمبا اور موٹا ہوتا جا رہا تھا۔۔۔۔۔کچھ ہی دیر میں لن تن چکا تھا۔۔۔۔جنرل نے لڑکی پر جھکتے ہوئے لن اس کے پیٹ اور چوت پر رگڑنے لگا۔۔۔اور خود اوپر اس کے چہر ے پر آ گیا۔۔۔ گالوں پر اپنے دانتوں کو گاڑتا ہوا وہ ہونٹوں پر آیا ۔۔۔اور اس بھی کاٹنے کی کوشش کر نے لگا۔۔۔لڑکی کے منہ سے پھر درد بھری آواز نکلی ۔۔۔اس کے ہاتھ اب تک پیچھے ہی بندھے تھے ۔۔۔۔۔۔۔ جنرل نے اب نیچے آتے ہوئے اس کے سینے پر بھی دانت لگانے شروع کر دیا ۔۔۔۔۔۔دونوں مموں پر باری باری دانت گاڑنے لگا۔۔۔۔کاٹنے لگا۔۔۔۔لڑکی کے منہ سے درد بھری آوازیں تیز ہونے لگی ۔۔۔۔وہ خود کو دائیں بائیں ہو کر بچانے کی کوشش کر تی ۔۔۔۔۔مگر نپل جنرل کے منہ میں دبے ہوتے جس سے وہ پھر ساکت ہو جاتی اور چیخ مار اٹھتی ۔۔۔۔۔۔
    ادھر سیکورٹی چیف حیفی بھی اپنے کمرے میں اکیلا نہیں تھا۔۔۔۔۔آج وہ خود اس اغواء والے گروپ کے ساتھ گیا تھا۔۔۔۔اور ایک ہی گھر سے ماں بیٹی کو اٹھا لایا ۔۔۔۔بیٹی اپنے افسر کے حوالے کر کے وہ خود ماں پر لیٹا ہوا تھا۔۔۔۔اس نے بھی شراب پلا کر ماں کو بے دم کر دیا ۔۔۔اور اب الٹالٹائے پیچھے سے دھکے مارنے میں لگا ہوا تھا۔۔۔۔نیم بند آنکھوں سے آنسو ۔اور منہ سے درد بھری سسکاریاں کمرے میں گونج رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔
    جنرل ہارزی نے اس لڑکی کے مموں کو لال سرخ کر دیا تھا۔۔جگہ جگہ اس کی بائٹ کے نشان بنے ہوئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔اب اس کے دانت نیچے کا سفر شروع کر رہے تھے ۔۔۔۔اور جگہ جگہ کاٹنے کے بعد چوت پر جارکے ۔۔۔۔۔چوت کو منہ میں دبوچنے کی کوشش کرنے لگا۔۔۔لڑکی نے پاؤں سمیٹنے کی کوشش کی۔۔۔۔مگر جنرل کے ہاتھ اس کی ٹانگیں جکڑ چکے تھے۔۔۔۔۔۔وہ چوت پر بھی دانت گاڑنے لگا۔۔۔۔لڑکی کے منہ سے اب اور بلند آوازیں نکلی رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔جنرل کی زبان تنگ چوت کے اندر پھسلتی ہوئی جانے لگی۔۔۔۔۔اور ہونٹ چوت کے لبوں کو پکڑنے لگے ۔۔۔۔۔۔۔لڑکی کا جسم تیزی سے مچل رہا تھا۔۔۔۔۔مگر جنرل اپنی دھن میں مگن تھا۔۔۔۔۔۔زبان کو تیز ی سے اندر باہر کرتے ہوئےوہ سر ہلا رہا تھا۔۔۔۔۔ لڑکی کی ٹانگیں اب زور لگانے کے بجائے کپکپا رہی تھی۔۔جنرل نے ٹانگ سے ہاتھ اٹھائے اور اوپر کی طرف لے گیا ۔۔۔جہاں لال سرخ مموں پر رکھ کر دبوچنے لگا۔۔۔۔۔ممے اس کی پکڑ سے بڑے تھے ۔۔۔۔جسے وہ پوری طاقت سے پکڑنے اور دبانے کی کوشش میں تھا۔۔۔
    ادھر اس کی زبان بھی تیزی سے حرکت میں تھی ۔۔۔لڑکی کے منہ سے بے ترتیب آوازیں نکل رہی تھی۔۔۔۔۔۔چہرے پر پسینہ کے آثار آئے ہوئے تھے ۔۔۔۔جنرل نے آخر زبان نکالی ۔۔۔۔اور ۔۔۔۔۔ٹانگوں کے درمیان آ بیٹھا۔۔۔۔سریلی سسکیوں اور آہوں نے اس کے لن کی سختی میں کئی گنا اضافہ کر دیا تھا۔۔۔۔اور وہ ٹوپے کو چوت پر رگڑتے ہوئےگیلا کرنے لگا۔۔۔ساتھ ہی ایک ہلکا سا دھکا دیتا ہوا چوت کے اندر پہنچا ۔۔۔۔۔لڑکی کے منہ سے ایک چیخ نکلی ۔۔۔۔۔جنرل نے اس اٹھی ہوئی ٹانگوں کو اپنی بانہوں میں بھرتے ہوئے قریب کیا ۔۔۔۔۔اور ایک بھرپور دھکے سے لن کو اندد دھکیل دیا ۔۔۔۔رکاوٹ ٹوٹ گئی ۔۔۔لڑکی کے منہ سےا یک اور تیز چیخ نکلی ۔۔۔۔۔جنرل نے لن کو باہر نکالتے ہوئے اس پر خون کی سرخی دیکھی ۔۔۔۔۔اور پھرآگے کو جھکتے ہوئے ایک اور زوردار جھٹکا دے مارا۔۔۔۔لڑکی کے منہ سے ایک دلدوز چیخ نکلی ۔۔۔۔۔۔اس کا جسم تڑپ اٹھا تھا۔۔۔۔جنرل اب اس کی ٹانگوں کو اٹھاتے ہوئے اس کے کندھے سے ملانے لگا۔۔۔۔۔اور اوپر سے پھر بھرپور دھکا دے مارا ۔۔۔۔پورا لن اندر جا کر پھنس چکا تھا۔۔۔۔لڑکی کے منہ سے چیخیں اب بھی جاری تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔جنرل نےلن نکالتے ہوئے دوبارہ پوری قوت سےا ندر پہنچایا۔۔۔۔۔۔لڑکی پھر ہلی ۔۔۔کانپی ۔۔۔۔چیخی ۔۔۔اس کے بعد جنرل نے تیزی سے یہی حرکت دہرانی شروع کردی ۔۔۔۔ٹوپے تک لن باہر نکالتا ۔۔۔۔اور پھر اندر دے مارتا ۔۔۔۔۔۔
    ادھر اس کی ماں بھی حیفی کے نیچے دبی ہوئی تھی۔۔۔۔۔گورے بڑے بڑے ممے اچھلے جا رہے تھے ۔۔۔۔۔۔حیفی اس کی ٹانگیں اوپر لگائے دھکے لگائے جارہا تھا۔۔۔۔۔منہ سے سسکیاں اور آہوں کا بازار گرم تھا۔۔۔۔۔بیڈ سے چوں چوں کی آواز ۔۔۔۔۔اور حیفی کے جسم سے بہتا ہوا پسینہ اسکی انتھک محنت کا ثبوت تھا۔
    جنرل نے لڑکی کی تنگ چوت میں لن کی جگہ بنا لی تھی۔۔۔۔ایک مرتبہ لڑکی کےچھوٹنے کے بعد اس نے ٹانگیں نیچے کر دی ۔۔۔۔۔۔اور بیڈ پر چار تکئے رکھ کر لڑکی کو اس پر الٹا لٹا دیا۔۔۔۔۔۔تکئے پیٹ کے نیچے رکھے تھے ۔۔۔جس نے لڑکی کے چوتڑوں کو اٹھا دیا تھا۔۔۔۔دونوں ہاتھوں سے چوتڑوں کو پھیلاتے ہوئے جنرل اب پیچھے سے سواری کر رہا تھا۔۔۔۔لڑکی کے بندھے ہوئے ہاتھوں کو پکڑ کر وہ تیزی سے دھکے دینے لگا۔۔۔۔۔۔۔گیلی چوت میں پھسلتا ہوا لن اندر جاتا ۔۔۔اور پھر پھنسا ہوا واپس آتا ۔۔۔۔جنرل نے لن باہر نکالا اور اب پیچھے کے ہول کو دیکھتے ہوئے اس پر ٹکا دیا ۔۔۔۔چھید بالکل بند تھا۔۔مگر جنرل کے سخت لن کے ٹوپے نے زور لگایا۔۔۔۔اور اندر جانے کا راستہ بنانے لگا۔۔۔۔۔لڑکی کے منہ سے پھر چیخیں نکلیں ۔۔۔۔۔۔ٹوپے اپنے زور سے اندر جا پھنسا تھا۔۔۔۔۔اندر کی گرمی نے جنرل کو اور پرجوش کر دیا۔۔۔۔اس نے اوپر لیٹتے ہوئے پورے لن کو اندر دھکیلا۔۔۔۔اور پھر کمر اٹھاتے ہوئے دوسرا دھکے مارنے لگا۔۔۔لڑکی بری طرح نشے میں ٹن تھی ۔۔۔۔اس کے منہ سے کراہیں اور وقفے وقفے سے چیخیں نکلتیں۔۔۔۔۔جنرل اب پوری قوت سے دھکے مار رہا تھا۔۔۔۔اس کی منزل قریب تھی۔۔۔اور پھر اسی طرح دھکے دیتا ہوا وہ اندر فارغ ہوا۔۔۔۔
    فارغ ہونے کے بعد وہ سائیڈ پر لیٹ گیا ۔۔۔فریج سے دوسری بوتل نکال کر منہ سے لگا لی ۔۔۔آدھی بوتل پینے کے بعد اس نے بوتل سائیڈ پر رکھی ۔۔۔۔اور لڑکی کے ہاتھ کھولنے لگا۔۔۔لڑکی درد اور نشے میں بےحال تھی ۔۔۔۔۔ہاتھ کھولنے کے بعد اس نے لڑکی کو خود پر سوار کروایا ۔۔۔۔اور لن چوت میں پھنسا کر اچھالنے لگا۔۔۔۔۔سامنے سے اس کے ممے دبوچتے ہوئےوہ کمر اچھالی جا رہا تھا۔۔۔۔۔لڑکی کے منہ سے رال بہے جارہی تھی۔۔۔نشے نے آنکھیں سرخ کر دی تھی ۔۔۔۔کچھ دیر بعد اسے خود پر لٹا کر وہ اسی طرح دھکے مارنے لگا۔۔۔کنواری چو ت نے اس کے لن کو پھر سے جوان کر دیا تھا۔۔۔۔جنرل اس طرح چودتے ہوئے تھکا تو لڑکی کو سینے سے لگائے بیڈ سے اتر آیا ۔۔۔اورصوفے پر لٹاتے ہوئے اس کے اوپر جھک گیا ۔۔۔اور پھر سے تیزی سے دھکے دینے لگا۔۔۔۔۔۔۔اس نے کچھ اور پوزیشنز چینج کیں ۔۔۔۔اور پھر کافی دیر جا کر فارغ ہوا ۔۔۔۔رات آدھی سے زیادہ تھی ۔۔۔لڑکی کے ہاتھ پیچھے باندھتا ہوا بستر پر جا لیٹا ۔۔۔۔صبح یہ لڑکی کسی ویرانے یا کھیت میں مردہ حالت میں ملنی تھی ۔۔۔۔جنرل نے کچھ دیر بعد نیند سے آنکھیں بند کر لیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    ٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
    میں بہتی آنکھوں سے جہاز کی طرف جا رہا تھا۔۔۔سامنے ہی ایک ویسٹرن ائیر ہوسٹس نے مجھے دیکھا ۔۔۔اور ویلکم کرتے ہوئے سیٹ دیکھی ۔۔۔اور اس سائیڈ پر اشارہ کر دیا۔۔۔میں دھندلی آنکھوں سے نیچے دیکھتا ہوا اپنی سیٹ پر آن بیٹھا ۔۔۔۔۔۔۔جہا ز کی سیٹیں فل ہورہی تھی ۔۔۔۔۔۔کچھ ہی دیر میں ائیر ہوسٹس نے موبائل اور دوسری چیزیں بند کرنے کا کہا ۔۔۔۔۔۔مگر میرے پاس یہ سب کہاں تھا۔۔۔۔بس یادیں تھین ۔۔۔کلدیپ کے ساتھ گزرے ہوئے ایک ایک لمحے کی ۔۔۔۔اور ائیرپورٹ کے باہر گھیرا ڈالے میرےساتھیوں کی۔۔۔۔۔۔۔جن کی نظریں ابھی تک میرے جہاز کو فضاؤں میں ڈھونڈ رہی تھیں۔۔۔عاصم ۔۔چیتا ۔۔۔۔ناصر ۔۔۔شاکر ۔۔اور وسیم ۔۔۔سب ہی تو تھے باہر۔۔۔
    جہاز ہوا میں اڑ چکا تھا۔۔۔ائیر ہوسٹس نے حفاظتی مشق سمجھا دی تو میں نے بیلٹ کھولتے ہوئے پیچھے ٹیک لگا لی ۔۔۔۔۔آنکھیں بند کرتے ہوئے میں ماضی کی طرف سفر کر ہی رہا تھا کہ ایکسکیوز می کی دلکش آواز میرے کان سے ٹکرائی ۔۔۔آنکھ کھلی تو سامنے ہی ائیر ہوسٹس مجھے اپنے ساتھ آنے کا کہہ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔میں نے غائب دماغی سے دائیں بائیں دیکھا ۔۔۔۔اور اٹھ کھڑا ۔۔۔۔۔میرا سفر بزنس کلاس کی طرف تھا ۔۔۔۔میرے آگے چلتی ہوئی ائیر ہوسٹس ایک کیبن کے سامنے رکی ۔۔۔اور مجھے آگے بڑھنے کا اشارہ کرنے لگی۔۔۔۔۔میں حیرت زدہ اندر داخل ہوا ۔۔۔۔جہاں ناقابل یقین منظر میرے سامنے تھا۔۔۔۔میرے استاد ۔۔۔میرے دوست عمران صاحب اپنی مخصوص مسکراہٹ سے میری طرف دیکھ رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میرے ضبط کا بندھن پھر ٹوٹا۔۔۔میں ان کےسینے سے جا لگا۔۔۔۔آنسووں کی جھڑیا ں پھر جاری ہو گئیں ۔۔۔۔۔وہ پیار بھرے انداز میں تھپکی دیتے رہے ۔۔۔۔۔۔اور پھر اپنے ساتھ سیٹ پر بٹھا دیا۔۔۔۔پانی کاگلاس مجھے تھماتے ہوئے سمبھالنے کا کہا۔۔۔۔۔میری اور کلدیپ کی وابستگی سے اچھے سے واقف تھے ۔۔۔۔۔۔۔ اور یہ بھی کہ کم عمری میں ہی مجھے اپنے گھر سے دور آنا پڑا ۔۔۔۔۔کچھ دیر بعد میری حالت سمبھل گئی ۔۔۔۔عمران صاحب نے مجھے تسلی دی ۔۔۔ اور سامنے اپنے لیپ ٹاپ کو کھولنے لگے ۔۔۔۔یہ سب عاصم کی ہی حرکت ہو گئی ۔۔۔کہ جو ہم ایک فلائٹ میں اکھٹے ہو گئے ۔۔۔۔
    عمران صاحب نے مجھے میری گھر والوں کی ویڈیو دکھا ئی ۔۔۔۔وہ خود ٹائیگر کے ساتھ ہمارے گھر میں تھے ۔۔۔۔۔۔۔میں نے سب کو نم آنکھوں سے دیکھا ۔۔سب خوش تھے ۔۔اور میرے لئے دعائیہ پیغام ریکارڈ کروا رہے تھے ۔۔۔۔۔۔اس کے بعد عمران صاحب سنجیدہ ہوگئے ۔۔۔۔۔میرا مشن اسرائیل میں تھا۔۔۔جہاں یقینی طور پر ذرہ ذرہ میرا دشمن تھا۔۔۔۔۔۔قدم قدم پر میرے لئے موت کے پھندے تھے ۔۔۔اس کے لئے کافی تیاری پہلے ہوچکی تھی ۔۔۔۔عمراں صاحب نے مجھے خصوصی ٹریننگ کروائی تھی۔۔۔ساتھ ساتھ عشنیا کے دئیے ہوئے مشروب نے بھی نئے کمالات جگائےتھے۔ایک گھنٹے تک میری بریفنگ جاری رہی۔۔۔وہاں موجود دوست کے نام اور مدد لینے کا انداز ۔۔مشن کی ایک ایک بات ۔۔۔۔میں سب سمجھ چکا تھا۔۔۔میری یہ فلائٹ ترکی کے لئے تھی ۔۔۔۔جہاں ایک کنیکٹنگ فلائٹ کےساتھ جارڈن جانا تھا۔۔۔۔اور پھر کچھ اسمگلرز اور وار لارڈز کے ساتھ بارڈر پار کرنا تھا۔۔۔عمران صاحب نے مجھے یہ بھی بتا دیا کہ اسرائیلی انٹیلی جنس میرے بچ جانے سے باخبر ہے ۔۔۔۔اور ہو سکتا ہے کہ میرے استقبال کے لئے پوری طرح سے تیار بھی ہوں ۔۔
    عمراں صاحب میری تیاری سے مطمئن تھے ۔۔۔۔لیپ ٹاپ بند کرتے ہوئے انہوں نے پھر مجھے تسلی دی ۔۔۔حوصلہ افزائی کی ۔۔۔وطن کے لئے سرفروش بننا آسان نہیں تھا۔۔۔اس راہ میں اپنے بچھڑتے رہتے ہیں ۔۔۔۔ان کی شانے پر مخصوص تھپکی میرے لئے اعزاز کی بات تھی ۔۔۔جس کا لمس میرے لئے ہر مشکل حالات میں سکون کا باعث بنتا تھا۔۔۔جہاز کا دبئی میں اسٹے تھا ۔۔۔۔اور یہیں عمراں صاحب نے مجھے سے الگ ہونا تھا۔۔۔۔۔۔ہم پھر گرم جوشی سے ملے ۔۔۔۔ایک آوارہ آنسو پھر آنکھ سے ٹپک پڑا ۔۔۔۔مگر یہ خوشی کا تھا۔۔۔مطمئن ہونے کا تھا۔۔۔ میں اپنی سیٹ کی طرف چل پڑا ۔۔۔۔۔کچھ دیر بعد نیند کی آغوش میں ۔۔۔۔ جب آنکھ کھلی توجہاز کا کیپٹن ترکی میں لینڈنگ کا اعلان کر رہاتھا۔۔۔۔یہاں سے میرے مشن کا آغاز تھا۔۔۔میرے انتقام کا بھی ۔۔۔
    ٭٭٭٭٭٭٭
    THE DEVIL WHISPERS YOU CANT WITHSTAND THE STORM

    MY REPLIED , TAKE A SIDE , "I AM THE STORM"

  6. The Following 19 Users Say Thank You to hard.target For This Useful Post:

    abkhan_70 (28-06-2017), faraz861986 (28-06-2017), farhan9090 (10-01-2018), khan_hotmale (28-06-2017), Leonard (29-06-2017), Lovelymale (29-06-2017), mbilal_1 (30-06-2017), Mirza09518 (28-06-2017), panjabikhan (29-06-2017), piyaamoon (28-06-2017), Rana Tanha (28-06-2017), ruldguld123 (29-06-2017), SaMe3r (29-06-2017), saqi870 (03-07-2017), sexeymoon (29-06-2017), Story Teller (23-06-2018), Story-Maker (29-06-2017), suhail502 (02-07-2017), teno ki? (28-06-2017)

  7. #4
    teno ki? is offline Premium Member
    Join Date
    Feb 2012
    Posts
    343
    Thanks
    506
    Thanked 575 Times in 255 Posts
    Time Online
    1 Week 3 Days 13 Hours 52 Minutes 24 Seconds
    Avg. Time Online
    6 Minutes 32 Seconds
    Rep Power
    43

    Default

    Quote Originally Posted by hard.target View Post
    سرفروش 3 (مشن اسرائیل )

    ٭ وطن سے دور لڑا جانے والا ایک اور یادگار معرکہ ، جہاں زندگی موت کے تعاقب میں تھی ۔

    ٭ وطن کی محبت اور انتقام کے جذبے نے اسے ناقابل شکست بنا دیا تھا ، وہ جان لٹانے کی ہر کوشش میں تھا۔

    ٭ یمام ۔ اسرائیل کی بارڈر فورس ۔۔ جس کے حصار کو تہس نہس کرتا ہوا وہ اسرائیل میں داخل ہوا ۔۔

    ٭ جنرل ہارزی حالوی ۔ ملٹری انٹیلی جنس کا چیف ۔ جس سرپھرے کی تلاش پورے اسرائیل میں کر رہا تھا وہ اس کے اپنے گھر میں موجود تھا ۔۔

    لیڈی بلیک ۔۔ موساد کی اسپیشل ایجنٹ ۔۔ جسے خاص اسے مردہ یا زندہ پکڑنے کے لئے بلایا گیا ۔۔ اور پھر جب دونوں کا آمنا سامنا ہوا ۔۔۔


    ٭ عقاب ۔ پاکیشیا کا فارن ایجنٹ ، موت کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر مسکرانے والا ، جس کی بہادری نے راجہ کو بھی ششدر کر دیا۔

    ٭ اسرائیل کی ہر کوشش خاک میں ملتی رہی اور وہ ہر اہم عمارت پر اپنی فتح کا نشان گاڑتا رہا ۔۔۔

    ٭فاریہ ۔ عرب دوشیزہ جو فلسطین کی تحریک آزادی میں پیش پیش تھی ، ، اور اب تینوں ایک ہی مشن میں اکھٹے تھے۔۔

    ٭ آخر زندگی کو ہار ماننا پڑی ۔ اور صحرا میں گولیوں کی بارش نے اسے زمین بوس کر دیا ، موت اس سے چند قدم کے فاصلے پر ۔۔۔۔

    ٭ آخر اسرائیل نے اس سرپھرے کے آگے اپنی ہار مانی اور ایکسٹو سے اسے واپس بلوانے کے لئے فون کرنے لگا۔۔۔

    ٭ ہر لمحہ ایکشن ۔۔ اور آتش و بارود سے بھرپور ۔۔۔۔
    کیا حال ھے بھائ
    آپ نے جب سے اس ناول کا کھا تھا تب سے بھت شدت سے منتظر ھوں

    میں سوچ رھا تھا کہ عید پہ کچھ خاص آنا چاھئیے
    مگر یہ دیکھ کے تو دل بھت خوش ھوا
    پلیز جلد شئیر کریں
    شکریہ

  8. The Following 5 Users Say Thank You to teno ki? For This Useful Post:

    abkhan_70 (28-06-2017), hard.target (28-06-2017), mbilal_1 (30-06-2017), panjabikhan (29-06-2017), ruldguld123 (29-06-2017)

  9. #5
    hard.target's Avatar
    hard.target is online now Premium Member
    Join Date
    Dec 2013
    Location
    Pakistan , India , UAE , Korea , Taiwan
    Posts
    268
    Thanks
    278
    Thanked 1,455 Times in 244 Posts
    Time Online
    5 Days 18 Hours 26 Minutes 27 Seconds
    Avg. Time Online
    5 Minutes 2 Seconds
    Rep Power
    991

    Default

    Quote Originally Posted by mbilal_1 View Post
    Welcome Cheetay..
    Shiddat se intzaar hai aap k dhamaky ka.
    Khush rahein aur likhty rahein..
    شکریہ دوست ۔۔ عید مبارک بھی ساتھ ساتھ ۔

    کہانی کا اسٹارٹ شروع کر دیا ہے ۔۔۔
    اب آپ لوگوں کے رسپونس کا انتظار ہے ۔۔۔پچھلے کئی دنوں سے فورم خاموش ہے ۔۔
    آگے دیکھیں کیا ہوتا ہے ۔۔۔ اس کہانی کو تین سے چار اقساط میں ختم کرنے کا ارادہ ہے ۔۔۔
    یہ صرف تعارفی قسط تھی کہ فورم میں زندگی ہے یا نہیں ۔۔۔
    اگلی قسط آپ کے رسپونس کی منتظر ہے۔۔۔۔
    THE DEVIL WHISPERS YOU CANT WITHSTAND THE STORM

    MY REPLIED , TAKE A SIDE , "I AM THE STORM"

  10. The Following 9 Users Say Thank You to hard.target For This Useful Post:

    abkhan_70 (28-06-2017), faraz861986 (28-06-2017), lastzaib (28-06-2017), mbilal_1 (30-06-2017), panjabikhan (29-06-2017), ruldguld123 (29-06-2017), SaMe3r (29-06-2017), Story-Maker (29-06-2017), suhail502 (02-07-2017)

  11. #6
    teno ki? is offline Premium Member
    Join Date
    Feb 2012
    Posts
    343
    Thanks
    506
    Thanked 575 Times in 255 Posts
    Time Online
    1 Week 3 Days 13 Hours 52 Minutes 24 Seconds
    Avg. Time Online
    6 Minutes 32 Seconds
    Rep Power
    43

    Default

    بھت شکریہ دوست
    پھلے کمنٹ کرکے کے دیکھا تو اپڈیٹ آئ ھوئ تھی
    ورنہ میرا خیال تھا کہ شائد ابھی ٹریلر آیا ھے سٹوری اک آدھ دن کے بعد آئے

    خیر جی
    بھت بھت شکریہ محترم

  12. The Following 4 Users Say Thank You to teno ki? For This Useful Post:

    abkhan_70 (28-06-2017), faraz861986 (28-06-2017), ruldguld123 (29-06-2017), suhail502 (02-07-2017)

  13. #7
    hard.target's Avatar
    hard.target is online now Premium Member
    Join Date
    Dec 2013
    Location
    Pakistan , India , UAE , Korea , Taiwan
    Posts
    268
    Thanks
    278
    Thanked 1,455 Times in 244 Posts
    Time Online
    5 Days 18 Hours 26 Minutes 27 Seconds
    Avg. Time Online
    5 Minutes 2 Seconds
    Rep Power
    991

    Default

    Quote Originally Posted by teno ki? View Post
    بھت شکریہ دوست
    پھلے کمنٹ کرکے کے دیکھا تو اپڈیٹ آئ ھوئ تھی
    ورنہ میرا خیال تھا کہ شائد ابھی ٹریلر آیا ھے سٹوری اک آدھ دن کے بعد آئے

    خیر جی
    بھت بھت شکریہ محترم

    بہت خوشی ہوئی آپ کا کمنٹ دیکھ کر ۔۔ پہلی کہانی سے آپ سے تعلق بنا تھا۔۔
    خیر مقدم کا شکریہ ۔۔۔جلد ہی اگلی قسط ملے گی ۔۔۔
    THE DEVIL WHISPERS YOU CANT WITHSTAND THE STORM

    MY REPLIED , TAKE A SIDE , "I AM THE STORM"

  14. The Following 5 Users Say Thank You to hard.target For This Useful Post:

    abkhan_70 (28-06-2017), faraz861986 (28-06-2017), ruldguld123 (29-06-2017), SaMe3r (29-06-2017), suhail502 (02-07-2017)

  15. #8
    teno ki? is offline Premium Member
    Join Date
    Feb 2012
    Posts
    343
    Thanks
    506
    Thanked 575 Times in 255 Posts
    Time Online
    1 Week 3 Days 13 Hours 52 Minutes 24 Seconds
    Avg. Time Online
    6 Minutes 32 Seconds
    Rep Power
    43

    Default

    ۔وطن کے لئے سرفروش بننا آسان نہیں ھوتا اس
    راہ میں اپنوں سے بچھڑنا پڑتا ھے
    انتھائ معزرت کے ساتھ تھوڑی سی ترمیم کی
    مگر یہ میرے اپنے الفاظ ھیں
    نا کہ سٹوری کے الفاظ پہ اعتراض

    بھت شدت سے منتظر ھون اپڈیٹ کا

  16. The Following 3 Users Say Thank You to teno ki? For This Useful Post:

    abkhan_70 (28-06-2017), ruldguld123 (29-06-2017), suhail502 (02-07-2017)

  17. #9
    piyaamoon's Avatar
    piyaamoon is offline Premium Member
    Join Date
    Dec 2010
    Posts
    3,928
    Thanks
    24,154
    Thanked 7,957 Times in 2,605 Posts
    Time Online
    4 Weeks 4 Hours 53 Minutes 11 Seconds
    Avg. Time Online
    17 Minutes 12 Seconds
    Rep Power
    429

    Default

    nice start dear

  18. The Following 5 Users Say Thank You to piyaamoon For This Useful Post:

    abkhan_70 (28-06-2017), faraz861986 (28-06-2017), hard.target (29-06-2017), lastzaib (28-06-2017), ruldguld123 (29-06-2017)

  19. #10
    jaffar1975 is offline Premium Member
    Join Date
    Jan 2015
    Posts
    1
    Thanks
    24
    Thanked 2 Times in 1 Post
    Time Online
    1 Day 10 Hours 41 Minutes 9 Seconds
    Avg. Time Online
    1 Minute 40 Seconds
    Rep Power
    0

    Default

    Good start

  20. The Following 2 Users Say Thank You to jaffar1975 For This Useful Post:

    abkhan_70 (28-06-2017), ruldguld123 (29-06-2017)

Page 1 of 13 1234511 ... LastLast

Bookmarks

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •