Page 1 of 21 1234511 ... LastLast
Results 1 to 10 of 210

Thread: محبت جب ہوئی۔۔best story of the month of feb 2015

  1. #1
    Pia_gee's Avatar
    Pia_gee is offline UrduFunda
    Join Date
    Nov 2011
    Location
    Lahore
    Posts
    1,355
    Thanks
    5,260
    Thanked 6,395 Times in 1,313 Posts
    Time Online
    1 Week 1 Day 26 Minutes 10 Seconds
    Avg. Time Online
    4 Minutes 50 Seconds
    Rep Power
    1565

    Default محبت جب ہوئی۔۔best story of the month of feb 2015


    میں گلا کھنکھار کے کمرے میں داخل ہوا تو مناہل نے جلدی سے دوپٹہ کو درست کر کے اپنی آنکھیں بند کر لیں اور سمٹ کے بیٹھ گئی۔۔ میں نے دروازے کو چٹکنی لگائی اور آئستہ آئستہ نپے تلے قدم ااُٹھاتا ہوا اس کے قریب بٹھ گیا ۔کمرے میں ٹیوب لائٹ کی تیز روشنی تھی۔سیج کی جھنڈیوں سے ٹکرا کے منعکس ہوتی روشنی کمرے کو خواب ناک بنا رہی تھی۔۔۔ مگر مناہل کے وجود سے اُٹھنے والی طلسماتی کرنیں اس روشنی کو ماند کر رہی تھیں۔ریڈش سوٹ اُسے بلاشبہ سوٹ کر رہا تھا۔مناہل ملکوتی حسن کی ملکہ تھی۔وہ کسی شاعر کی غزل کا جیتا جاگتاطلسماتی عنوان تھی جسکا ایک ایک لفظ محبت، کی چاشنی اور خلوص کے دل لبھاتے مصرعوں سے مزین تھا۔۔۔میں چند لمحے اُسکی من کو موہ لینے والی صورت کو تکتا رہا۔ موہنی صورت پہ بار بار نمودار ہوتا حیا کا سرخی مائل رنگ اسکی شادابیت کو مزید بڑھا دیتا۔ ۔ میں نے ہاتھ بڑھا کر اس کا حنائی ہاتھ تھام لیا تو وہ پہلو بدل کے رہ گئی۔۔مناہل ۔۔میں نے ہولے سے اُسے کے کومل ہاتھ کو سہلاتے ہوئے مخمور لہجے میں پُکارا ۔اُس نے کوئی جواب نہیں دیا۔۔مگر اُس ماہ جبیں کی لرزتیں پلکیں ،کپکپاتے ہونٹ ۔اور سانسوں کی بتدریج بڑھتی روانی چیخ چیخ کر ہو شربا جذبات میں موجزن طلاطم خیز موجوں کی بغاوت کا پتہ دے رہے تھے۔میں نے اپنی گرفت اسکے ہاتھ پہ تھوڑی سخت کی تو وہ کسمسا کے رہ گئی۔میں خاصا محظوظ ہوا۔ میں نے غور سے اُسکے مخملی شادابی چہرے کو اپنی نظروں میں سموتے ہوئے پھر پکارا۔۔مناہل۔۔اب کی بار مایوسی نہیں ہوئی۔۔اُسکے لب کپکپائے۔۔ج ج جی۔۔اُس کے لبوں کی کمان نے اپنے ترکش کا پہلا تیر چھوڑا جو سہی نشانے پہ بیٹھا۔۔میرا دل عش عش کر اُٹھا۔۔میں نے اوپر والے کا شکر ادا کیا جس نے خود کو ایک حسین مجسمہ میں مجھے دکھایا۔۔جس پر میں جتنا بھی شکر گزار ہوتا کم تھا۔
    ۔۔۔۔۔۔ jjj۔۔۔۔۔
    دروازے کو دھڑ دھڑ پیٹا جا رہا تھا۔میں ہڑبڑا کے اُٹھ گیا۔دسمبر کا مہینہ تھا اور سردی اپنی تمام تر حشر سامانیوں کے ساتھ فتنہِ انگیزاں تھی۔میں نے اٹھ کر لائٹ آن کی اور اپنی رسٹ واچ پہ نظر ڈالی۔۔تین بج چکے تھے۔اتنی رات کو کون ہو سکتا ہے؟میں نے کوفت سے سوچا۔لاہور شہر میں آئے مجھے ایک مہینہ بمشکل ہوا تھا۔ایک گورنمنٹ کالج میں لیکچرر کی میری پوسٹنگ ہوئی تھی۔بنیادی طور پہ میرا تعلق مظفرآباد، آزاد کشمیر کے ایک زمیندار گھرانے سے تھا،،۔لاہور دیکھنے کا مجھے بچپن سے ہی شوق تھا جس کی تکمیل اب ہو پائی تھی۔ایک دوست کے توسل سے ایک ٹاؤن میں ایک مکان مل گیا تھا جو کالج کے بالکل قریب تھا۔میں کالج سے فارغ ہوتا اور لاہور شہر کی سڑکیں ماپتا۔لاہوری چٹ پٹے کھانے ٹھونستا اور رات کو پاوں پسار کے سو جاتا۔۔ ۔تو اب تک حالات ٹھیک جا رہے تھے۔لیکن نوشتہ تقدیر کبھی مٹ نہیں سکتا۔ ۔تاریخ گواہ ہے تقدیر اور بنی آدم کی لڑائی میں شکست ہمیشہ انسان کا مقدر بنی۔۔۔تقدیر جس نے بڑے بڑے سورماؤں کو دنیا کے اسِ اکھاڑے میں پچھاڑ دیا ہے۔آج اُسکا رخ میرے گھر کی طرف تھا۔دروازہ اب بھی مسلسل پیٹا جا رہا تھا۔میں بمشکل اُٹھا اور باہر آیا۔کون ہے ؟ میں نے دروازے کے قریب جا کر آئستگی سے پوچھا۔۔خدا کے لئے دروازا کھولیں ورنہ وہ مجھے مار ڈالیں گے۔ایک جوان سسکتی، بلکتی اور خوف بھری نسوانی آواز مجھے سنائی دی تو میرے دماغ میں خطرے کی گھنٹیاں بجنا شروع ہو گیئں۔رات کا پچھلا پہر تھا۔اور آج کل تو ایسے واقعات عام سی بات تھے کہ اسی طرح مدد اور مظلومیت کا رونا رو کر حسینہ ڈاکو اپنے ساتھیوں سمیت گھروں کے گھر لوٹ کے اُڑن چھو ہو جاتی تھی۔ یہ خیال آتے ہی خوف کی ایک سرد لہر میرے رگ و پے میں سرایت کر گئی۔ بیٹا غزن علی(میرا نام) آج لگتا ہے تیری خیر نہیں۔کسی وقت کے کئے گئے گناہ کی سزا کاوقت قریب آ گیا۔ یہ لوگ میرے ساتھ کیا کیا کریں گے یہ سوچتے ہی میرے وجود میں جھر جھری سی آ گئی۔۔ ۔۔،،پلیز دروازا کھولیں۔۔خدا کے واسطے مجھے اُن جلادوں سے بچا لیں۔وہ سسکتے ہوئے پھر بولی تو میں چونک کے اُس وحشت ناک تصور سے باہر نکلا جو مجھے خوف سے ہلکاں کئے ہوئے تھا۔۔ کوں ہو تم اور
    کون لوگ تمہیں مار ڈالیں گے
    ۔میں نے تھوک نگلتے ہوئے بمشکل ہمت کر کے پوچھا۔۔آُپ مت کھولیں دروازا۔۔وہ گلوگیر لہجے میں بولی۔۔جب وہ لوگ مجھے مار کے چلیں جائیں تو یہ باتیں میری لاش سے پوچھ لینا۔۔یہ کہہ کر وہ ہچکیاں لے لے کے رونے لگی۔۔میں سوچ میں پڑ گیا۔۔لڑکی کی باتوں اور اُسکے انداز سے لگ رہا تھا کے وہ واقعی مصیبت میں ہے۔۔میں نے ایک لمحے کے لئے مزید سوچا اور دروازہ کھولنے کا فیصلہ کر لیا۔ ۔میں نے کنڈی ہٹا کے جیسے ہی دروازہ کھولا ایک یخ بستہ ٹھٹھرتا وجود میرے سینے سے آن زور سے ٹکرایا۔۔میں اس ناگہانی اُفتاد کے لئے قطعی تیار نہیں تھا تو میں اُٰس کو سنبھالنے کی کوشش میں ایک طرف جھول گیا۔میں نے سنبھل کے اُسے ایک ہاتھ سے قابو کیا اور دوسرے ہاتھ سے کنڈی لگا کر بمشکل لڑکھڑاتے ہوئے اُسے اندر لےآیا۔۔اور ملائمت سے بیڈ پہ لٹا کر اُسکا ایک نظر تنقیدی جائزہ لیا۔اُس حوروش ماہ جبیں کے نین نقوش غضب کے تھے۔گول چہرہ، کشادہ پیشانی اور غضب کا کھلتا گورا رنگ جس میں شباب کی سرخی نُمایاں تھی۔۔معصوم شرمگیں چہرہ دل پہ چھریاں چلا رہا تھا۔۔اُس نے میلی کچیلی چادر میں اپنے وجود کو لپیٹا ہوا تھا۔ ۔۔یخ سردی میں اسکی برداشت کی حد قابلِ ستائش تھی۔اتنی غیر معمولی سردی میں وہ جانے کب سے در بدر کی ٹھوکریں کھا رہی تھی۔میں نے جلدی سے ہیٹر اُسکے قریب لا رکھا اور تھوڑا اُسے گھسیٹ کے بیڈ کے کنارے لایا تاکہ ہیٹر کی تپش اُس کے بدن تک پہنچے۔اسکے ساتھ میں اُسکے ہاتھوں اور پاؤں کی مالش بھی شروع کر دی جو برف بن چکے تھے۔۔مجھے اپنی بے اعتنائی کا بھی افسوس ہورہا تھا۔۔اگر کچھ دیر اور میں دروازہ نا کھولتا تو وہ مر بھی سکتی تھی۔۔آج مجھے احساس ہوا کہ میں کتنا بزدل اور ڈرپوک تھا۔۔خیر آئستہ آئستہ اُس کو ہوش آگیا اور اس نے اپنی آنکھیں کھولیں دیں۔۔۔
    . ....
    J j j
    ستارہ کا باپ سکندر اول درجے کا شرابی اور جواری تھا۔۔جب تک ستارہ کی ماں نسیم بیگم زندہ رہی محنت مزدوری کر کے اپنا اور اپنی بیٹی کا پیٹ پالتی رہی۔۔گو کے سکندر سیکٹریٹ میں کلرک تھا اور اوُپری کمائی بھی اچھی خاصی تھی مگر کہتے ہیں چوت کی کمائی مُوتہ میں ہی جاتی ہے۔بڑی سوسائٹی کی گفن صحبت نے اُسے شراب اور شباب کا رسیا بنا دیا تھا۔۔ ۔سارا پیسہ شراب، فاحشہ عورتوں اور جوئے میں لٹ جاتا۔نسیم بیگم نے اپنے تئیں بہت کوشش کی مگر وہ سکندر کو راہ راست پہ نا لا سکیں۔۔سکندر اِتنی دور جا چکا تھا کے واپس آنا مشکل تھا۔جب ستارہ پیدا ہوئی تو نسیم بیگم کے دل میں ایک مبہم سی آس جاگی کہ شاید اب سکندر راہ راست پہ آ جائے مگر بے سود۔۔۔ وہ صبر کا کڑوہ گھونٹ بھرے اپنی ننھی سی جان کو اپنے کلیجے سے لگائے پھرتی رہی۔۔وقت گزرتا رہا۔سب کچھ بدل گیا مگر سکندر جوں کا توں رہا۔ریٹائرمنٹ کے بعد پنشن بھی سکندر نے اپنی عیاشیوں میں اُڑا دی۔۔اب اُسکی شراب کے اخراجات کا نزلہ بھی بیگم نسیم کے بوڑھے کندھوں پہ آ گرا۔۔ستارہ اب 21 سال کی ہو گئی تھی۔بچپن سے ہی ستارہ انتہائی سمجھدار اور سُگھڑ تھی۔۔باپ کی دی ہوئی محرومیوں اور ماں کی استقامت نے ستارہ کو کافی کچھ سکھا دیا تھا۔۔ماں کا ہاتھ بٹانے کے لئے ستارہ نے ٹیوشن پڑھانا شروع کر دیا تھا۔۔جس سے زیادہ نا سہی مگر کچھ حالات بہتر ہوئے تھے۔۔نسیم بیگم کی ستارہ سے کافی توقعات وابستہ تھیں۔اُنھیں یقیں تھا کہ جن محرومیوں سے وہ گزر کےآئیں ہیں اُنکا ازالہ انکی بیٹی جواں مردی سے کرے گی۔لیکن اس کے ساتھ ساتھ اُنھیں ستارہ کی شادی کی فکر بھی ستائے رکھتی۔۔۔۔ستارہ خوبصورتی میں اپنے نام کا مترادف تھی۔۔ جوانی کی دیوی اور حسن کا دیوتا اُس پہ خوب مہربان ہوئے تھے۔۔ سلکی سیاہ بالوں میں جھانکتا دودھیا چہرہ ، ستواں ناک اور گلاب کی پنکھڑیوں کو مات دیتے گلابی ہونٹ جن سے معنوں شہد ٹپکتا رہتا ہو نے اُسے قدرت کا انمول شاہکار بنا دیا تھا۔ستارہ کو جازب نظر بنانے میں بلاشبہ اُسکی ساحرانہ سیاہ آنکھوں کا بھی کمال تھا۔۔۔جن میں اکژ گلابی ڈورے تیرتے تھے، یہ ساحرانہ آنکھیں مدمقابل کو مسحور کر دیتی تھیں۔۔جو اُن کو دیکھتا پلکیں جھپکنا بھول جاتا۔ستارہ کا جسم متناسب تھا۔۔جس کی کٹائی نہایت پر کشش تھی۔۔۔کَسی ہوئیں چھاتیاں جن پہ گلابی نپل شباب کے سب سے اونچے مقام پہ براجمان تھے۔۔بھربھرے سے نازک چوتڑ۔جو خاصے اُبھرے ہوئے تھے۔نگاہ کو خیزہ کر دیتے تھے۔۔ستارہ کو اپنی خوب صورتی کا خوب ادراک تھا۔۔وہ ڈھیلا ڈھالا لباس اور ایک بڑی سی چادر زیب تن کرتی تھی۔۔ اپنے وجود کو اُس نے بہت سینچ کے رکھا ہوا تھا مبادہ کوئی بھیڑیا نما آدمی اُس سہمی ہوئی ہرنی کو بھنبھوڑ نہ دے۔۔مگر حسن سات پردے چھپانے سے بھی نہیں چھپتا۔۔ کالج سے اکیڈمی اور اکیڈمی سے گھر آنے تک کئی تپتی نگاہیں ستارہ کو اپنے وجود میں چبھتی ہوئی محسوس ہوتیں۔۔مگر وہ اپنی ماں کی مجبوریوں کا ادراک کرتی ہوئی کمالِ ضبط سے اپنی تمام زمہ داریوں کو پورا کرتی۔دن گزر رہے تھے۔ستارہ اپنی تعلیم مکمل کرنے کے بعد ایک اچھی فرم میں ملازمت کر لی۔۔ماہوار تنخواہ بھی اچھی خاصی تھی جس سے نسیم بیگم کو فراغت کے ایام میسر آ گئے تھے۔۔آج چھٹی کا دن تھا۔۔ستارہ گھر پہ تھی۔بیگم نسیم ستارہ کے گھنے بالوں میں تیل لگا رہی تھیں۔۔
    بیگم نسیم: ستارہ پتر تجھ سے ایک بات کہنی تھی۔۔
    جی مما جانی کہیئے۔۔ستارہ محبت سے بولی۔۔
    بیٹا تیری خالہ شاہین کل آیئں تھیں ۔اپنے بیٹے ارسلان کا رشتہ لے کر۔۔نسیم بیگم سنجیدہ لہجے میں بولیں۔۔
    تو؟ آپ نے کیا جواب دیا۔۔ستارہ چونک کر اپنا رخ ماں کی طرف کر کے بولی۔۔
    تجھ سے پوچھے یا صلاح لئے بغیر میں نے کوئی کام کیا ہے پگلی۔۔اور یہ تو تیری زندگی کا فیصلہ ہے۔میں اکیلی کیسے کر سکتی ہوں ؟۔نسیم بیگم پیار سے اُس کے سر پہ چپت مارتے ہوئے بولیں۔۔
    اوہ۔شکر ہے۔۔ستارہ گہری سانسس لی اور دونوں ہاتھوں سے اپنی ماں کا چیرہ تھام کر گویا ہوئی۔۔۔مما جی مجھے نہیں پڑنا ابھی شادی وادی کے چکر میں۔۔ابھی آپ کی ڈھیر ساری خدمت کروں گی۔۔دنیا کی ہر آسائش ہر خوشی اور آرام و سکوں آپکے قدموں پہ نچھاور کرنا ہے۔۔آپ نے اپنی ساری جوانی مجھے پالنے پوسنے میں لگا دی۔۔لوگوں کے جوٹھے برتن دھویے۔۔گالیاں سنی۔۔محرومیوں اور تنگدستی کے سوا آُپ نے کچھ نہیں دیکھا۔۔اور اب جب سب کچھ ٹھیک ہے ۔ آپکی بیٹی اس قابل ہے کہ آپ کے لئے کچھ کر سکے تو آپ چاہتی ہیں کے میں ڈولی میں جا کے کسی اور گھر چلی جاؤں۔۔؟ نہیں مما۔۔ میری خوشیوں کا محور صرف آپکی زات ہی ہے۔۔ آپکے سوا مجھے کچھ نہیں چاہیے۔۔آپکی خوشی ہی میرا سب کچھ ہے۔۔ میں اُن میں سے نہیں ہوں مما جن کے خواب جوانی میں مہندی سے شروع ہوتے ہیں اور ڈولی پہ ختم ہو جاتے ہیں۔۔جن کے پاس آپ جیسی مما ہوں نا۔۔اُنکی بیٹیاں جراءت و ہمت کے خواب دیکھتی ہیں اور استقامت و مستقل مزاجی کے ہتھیار سے دنیا کو شکست دے کر زمانے میں اُنکا سرفخر سے بلند کرتی ہیں۔نہ کے اپنی خوشیوں کے لئے اپنی ماں کے ارمانوں کا خون کر کے اپنی زندگی کی سیج سجاتی ہیں۔میں آپ کو بیچ منجھدھارِ چحوڑ کر کسی کی سیج نہیں سجا سکتی مما۔۔آپ نے اپنی زندگی مصیبتوں اور پریشانیوں میں گزاری ہے۔۔میں نہیں چاہتی کہ میرے پلے بھی کوئی سکندر پڑ جائے جو میری زندگی اجیرن کر دے،۔ ۔۔میں زندگی جینا چاہتی ہوں۔۔ابھی بہت سارا وقت باقی ہے شادی وغیرہ جیسی خرافات کے لیے۔۔
    نسیم بیگم کی آنکھیں فرطِ جزبات سے بھیگ گیئں۔۔اُنھوں نے بھینچ کر اپنی کلی کو اپنے سینے لگا لیا۔۔آج اُنکا سر فخر سے بلند ہو گیا۔۔ ستارہ نے اپنا منہ اُنکے سینے میں چھپا لیا۔۔
    وقت کو جیسے پر لگ گئے۔۔قسمت کی دیوی ستارہ پہ خوب میربان ہو گئی۔۔اُس نے اپنی خدا داد زہانت سے اپنی قابلیت کا لوہا منوایا۔اُسکی پروموشن ہو گئی تھی اور کمپنی کی طرف سے ایک لگژی گھر مل گیا۔۔سکندر اب گھر میں خاموش ہی رہتا تھا۔۔اُن دونوں ماں بیٹی سے کوئی بول چال نا تھا۔۔ستارہ موٹی رقم پہ مشتمل ایک لفافہ ہر مہینے اُس کے تکیے کے نیچے چھوڑ جاتی جس سے اُسکا گزارا ٹھیک ٹھاک ہو رہا تھا۔۔ ۔۔نسیم بیگم کو دل کے عارضے کی شکایت تھی۔۔جس کا علاج ستارہ تندہی سے کروا رہی تھی۔۔لیکن بڑھاپا خود ایک بماری ہے۔۔جس کا علاج کوئی نا تھا ۔نسیم بیگم کا مسلسل علاج ہونے کے باوجود کوئی خاص افاقہ نا ہو رہا تھا۔ پھر وہ ہوا جس نے ستارہ کی دنیا ویراں کر دی ۔۔ اچانک نسیم بیگم کےقلب نے آخری ہچکی لی اور سکوں کی نیند سو گیا۔۔ہمیشہ کے لئے۔۔نسیم بیگم کا بوڑھا وجود ہزاروں حسرتیں دل میں بسائے منوں مٹی تلے دفن ہو گیا۔۔۔۔وہ سایہ جس کے تلے ہمیشہ ستارہ پنہاہ گزیں رہی ۔۔جس نے سارے زمانے کی تپش خود پہ جھیلی مگر اپنی گڑیا کو زمانے کے گرم تھپیڑوں سے بچایا۔۔ آج وہ اپنی گڑیا کو اُسی مقام پہ چھوڑ گئیں جہاں خود اُنھوں نے اپنا سفر شروع کیا تھا۔۔


    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    کہانی ابھی جاری ہے۔۔۔۔۔

  2. The Following 34 Users Say Thank You to Pia_gee For This Useful Post:

    85sexy85 (02-01-2015), abba (06-01-2015), abkhan_70 (03-01-2015), Admin (12-01-2015), anjumshahzad (01-06-2017), asiminf (02-01-2015), bilamos78 (11-01-2015), Danish ch (12-12-2015), evilgenius85 (02-01-2015), faisal141 (03-01-2015), farhan9090 (09-01-2018), hotjani (05-03-2015), hot_irfan (19-02-2015), Irfan1397 (02-01-2015), jerryplay100 (07-01-2018), khoobsooratdil (02-01-2015), Khushi25 (12-12-2015), Lovelymale (02-01-2015), MAMONAKHAN (17-02-2015), mbilal_1 (13-02-2015), munda_lahori (02-01-2015), orange10 (02-01-2015), princesmaham (03-02-2015), Rare Lovely (23-04-2015), Rowdy Girl (22-05-2016), shaikhuu (24-02-2015), Silentstranger (10-05-2015), sirf_hum_pk (23-03-2015), Star193 (08-12-2015), suhail502 (03-01-2015), sumt_71 (02-01-2015), Sweet Maheen (02-01-2015), Wajdaan (02-01-2015), ZEESHAN001 (08-04-2015)

  3. #2
    orange10's Avatar
    orange10 is offline Premium Member
    Join Date
    Jan 2011
    Location
    Lahore
    Age
    29
    Posts
    121
    Thanks
    432
    Thanked 482 Times in 120 Posts
    Time Online
    1 Day 11 Hours 57 Minutes 20 Seconds
    Avg. Time Online
    54 Seconds
    Rep Power
    21

    Default

    hmmmm intezar rahay ga update ka...

  4. The Following 11 Users Say Thank You to orange10 For This Useful Post:

    85sexy85 (02-01-2015), abba (06-01-2015), asiminf (02-01-2015), hot_irfan (19-02-2015), Irfan1397 (02-01-2015), khoobsooratdil (02-01-2015), munda_lahori (02-01-2015), Pia_gee (02-01-2015), shaikhuu (24-02-2015), suhail502 (03-01-2015), Wajdaan (02-01-2015)

  5. #3
    baba_2099 is offline Premium Member
    Join Date
    Nov 2010
    Age
    38
    Posts
    71
    Thanks
    1
    Thanked 309 Times in 68 Posts
    Time Online
    5 Days 8 Hours 48 Minutes 31 Seconds
    Avg. Time Online
    3 Minutes 14 Seconds
    Rep Power
    16

    Default

    In start of 2015 lots of stories started let see these stories update daily or not

    Good luck

  6. The Following 13 Users Say Thank You to baba_2099 For This Useful Post:

    85sexy85 (02-01-2015), abba (06-01-2015), abkhan_70 (03-01-2015), anjumshahzad (01-06-2017), asiminf (02-01-2015), hot_irfan (19-02-2015), Irfan1397 (02-01-2015), khoobsooratdil (02-01-2015), munda_lahori (02-01-2015), Pia_gee (02-01-2015), shaikhuu (05-01-2015), suhail502 (03-01-2015), Wajdaan (02-01-2015)

  7. #4
    Irfan1397's Avatar
    Irfan1397 is offline super moderator
    Join Date
    Sep 2011
    Location
    Sahiwal
    Posts
    7,568
    Thanks
    26,336
    Thanked 38,404 Times in 7,351 Posts
    Time Online
    1 Month 2 Weeks 1 Day 9 Hours 50 Minutes 4 Seconds
    Avg. Time Online
    27 Minutes 23 Seconds
    Rep Power
    3132

    Default

    bohat he agaz hai . lafzon k moti bekhairnay mein ap ka koi sani nahi . bohat he umda pia gee .
    update ka wait rahy ga .

  8. The Following 10 Users Say Thank You to Irfan1397 For This Useful Post:

    85sexy85 (02-01-2015), abba (06-01-2015), abkhan_70 (03-01-2015), hot_irfan (19-02-2015), khoobsooratdil (02-01-2015), munda_lahori (02-01-2015), Pia_gee (02-01-2015), suhail502 (03-01-2015), Sweet Maheen (02-01-2015), Wajdaan (02-01-2015)

  9. #5
    ms tari is offline Premium Member
    Join Date
    Jun 2012
    Age
    33
    Posts
    276
    Thanks
    245
    Thanked 1,010 Times in 252 Posts
    Time Online
    1 Week 2 Days 8 Hours 55 Minutes 2 Seconds
    Avg. Time Online
    6 Minutes 5 Seconds
    Rep Power
    35

    Default


  10. The Following 9 Users Say Thank You to ms tari For This Useful Post:

    85sexy85 (02-01-2015), abba (06-01-2015), anjumshahzad (01-06-2017), hot_irfan (19-02-2015), khoobsooratdil (02-01-2015), munda_lahori (03-01-2015), Pia_gee (02-01-2015), suhail502 (03-01-2015), Wajdaan (02-01-2015)

  11. #6
    Pia_gee's Avatar
    Pia_gee is offline UrduFunda
    Join Date
    Nov 2011
    Location
    Lahore
    Posts
    1,355
    Thanks
    5,260
    Thanked 6,395 Times in 1,313 Posts
    Time Online
    1 Week 1 Day 26 Minutes 10 Seconds
    Avg. Time Online
    4 Minutes 50 Seconds
    Rep Power
    1565

    Default

    Quote Originally Posted by Irfan1397 View Post
    bohat he agaz hai . lafzon k moti bekhairnay mein ap ka koi sani nahi . bohat he umda pia gee .
    update ka wait rahy ga .
    hosla afzaai ka boht shukria bhai..

  12. The Following 10 Users Say Thank You to Pia_gee For This Useful Post:

    85sexy85 (02-01-2015), abba (06-01-2015), abkhan_70 (03-01-2015), anjumshahzad (01-06-2017), hot_irfan (19-02-2015), Irfan1397 (02-01-2015), khoobsooratdil (02-01-2015), munda_lahori (03-01-2015), suhail502 (03-01-2015), Wajdaan (02-01-2015)

  13. #7
    apnapun's Avatar
    apnapun is offline Premium Member
    Join Date
    Dec 2009
    Location
    karachi
    Posts
    397
    Thanks
    470
    Thanked 1,559 Times in 372 Posts
    Time Online
    6 Days 2 Hours 7 Minutes 21 Seconds
    Avg. Time Online
    3 Minutes 40 Seconds
    Rep Power
    141

    Default

    Behtreen plot k sath aik behtreen story start huee hay,,, umeed hay k aagay Bhi aisay hee chalay gee or speed say update Bhi hotee rahay gee

  14. The Following 10 Users Say Thank You to apnapun For This Useful Post:

    85sexy85 (02-01-2015), abba (06-01-2015), anjumshahzad (01-06-2017), hot_irfan (19-02-2015), khoobsooratdil (02-01-2015), munda_lahori (03-01-2015), Pia_gee (02-01-2015), shaikhuu (24-02-2015), suhail502 (03-01-2015), Wajdaan (02-01-2015)

  15. #8
    Wajdaan's Avatar
    Wajdaan is offline President
    Join Date
    Jul 2011
    Location
    Karachi
    Posts
    1,307
    Thanks
    8,858
    Thanked 6,084 Times in 1,270 Posts
    Time Online
    1 Day 11 Hours 31 Minutes 8 Seconds
    Avg. Time Online
    53 Seconds
    Rep Power
    1111

    Default

    زبردست لکھی ہے کہانی۔۔ اور اردو کے الفاظ کا استعمال بہت کمال کررہے ہیں۔ اردو پر مہارت حاصل ہے آپ کو

  16. The Following 14 Users Say Thank You to Wajdaan For This Useful Post:

    85sexy85 (02-01-2015), abba (06-01-2015), abkhan_70 (03-01-2015), anjumshahzad (01-06-2017), evilgenius85 (02-01-2015), hot_irfan (19-02-2015), Irfan1397 (02-01-2015), khoobsooratdil (02-01-2015), munda_lahori (03-01-2015), Pia_gee (02-01-2015), shaikhuu (24-02-2015), suhail502 (03-01-2015), sumt_71 (02-01-2015), Sweet Maheen (02-01-2015)

  17. #9
    Sweet Maheen's Avatar
    Sweet Maheen is offline Premium Member
    Join Date
    Jan 2013
    Posts
    602
    Thanks
    2,012
    Thanked 2,227 Times in 565 Posts
    Time Online
    20 Hours 32 Minutes 29 Seconds
    Avg. Time Online
    36 Seconds
    Rep Power
    651

    Default

    boht khubsurat aghaz kia hy. Apki phli stories bhi yaad hn esp shikari ye tehreer thori mukhtalif aur jazbati mger dil ko choone wali dastan lg rahi hy. umeed hy ek acha novel parhne ko mily ga.. bilashuba alfaz ka chunao bhi bht aalaa hy bilkul kisi manjhe hue writer ki trha

  18. The Following 9 Users Say Thank You to Sweet Maheen For This Useful Post:

    85sexy85 (02-01-2015), abba (06-01-2015), anjumshahzad (01-06-2017), hot_irfan (19-02-2015), khoobsooratdil (02-01-2015), munda_lahori (03-01-2015), Pia_gee (02-01-2015), shaikhuu (24-02-2015), suhail502 (03-01-2015)

  19. #10
    Pia_gee's Avatar
    Pia_gee is offline UrduFunda
    Join Date
    Nov 2011
    Location
    Lahore
    Posts
    1,355
    Thanks
    5,260
    Thanked 6,395 Times in 1,313 Posts
    Time Online
    1 Week 1 Day 26 Minutes 10 Seconds
    Avg. Time Online
    4 Minutes 50 Seconds
    Rep Power
    1565

    Default

    ap sub ki hosla afzaai ka boht shukria,,,agli update hazir hai..

  20. The Following 9 Users Say Thank You to Pia_gee For This Useful Post:

    85sexy85 (02-01-2015), abba (06-01-2015), anjumshahzad (01-06-2017), hot_irfan (19-02-2015), khoobsooratdil (02-01-2015), munda_lahori (03-01-2015), shaikhuu (24-02-2015), suhail502 (03-01-2015), Sweet Maheen (03-01-2015)

Page 1 of 21 1234511 ... LastLast

Bookmarks

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •