Results 1 to 8 of 8

Thread: Devta A Novel Longest Novel written ever

  1. #1
    Join Date
    Apr 2010
    Location
    Lahore, Pakistan
    Age
    31
    Posts
    12
    Rep Power
    208

    Default Devta A Novel Longest Novel written ever

    Devta is a serialized fantasy thriller novel written in the Urdu language by Mohiuddin Nawab. It was published monthly for 33 years in the Pakistani magazine Suspense Digest from 1977 to 2010. Devta is the fictional autobiography of Farhad Ali Taimoor, a man who gained amazing telepathic powers.

    Here is Link for download it All 56 Part in PDF format.

    Try it only if you have enough time to read it.

    All 56 Parts Download Link
    My Package is a Wackage

  2. #2
    Join Date
    Sep 2011
    Location
    Sahiwal
    Posts
    7,423
    Rep Power
    3118

    Default


    جب میں میٹرک کے امتحان سے فارغ ہوا تھا تو اس وقت تک اس کے چونتیس حصے شائع ہوئے تھے جو میں نے تقریبا دو ماہ میں پڑھ لئے تھے -
    یہ ناول بہت ہی رومانٹک ، سسپنس اور ایکشن سے بھرپور ہے , مجھے مرجانہ سونیا اور فرہاد کا کردار بہت پسند تھا
    مجھے آج بھی یاد ہے کہ پہلا سیکسی سین صفحہ نمبر پینتیس پہ تھا جس میں فرہاد علی تیمور کو اس کی کزن دھمکا کر اس سے سیکس کرتی ہے -
    بہت ہی زبردست ناول ہے ایک دفعہ شروع کرنے کے بعد ختم کئے بغیر نہیں رہا جا سکتا -

  3. #3
    Join Date
    Oct 2010
    Age
    27
    Posts
    872
    Rep Power
    469

    Default



    اردو ادب کی لازوال داستان ۔۔۔

    _____________________________________________
    GEO MAZAY SAY ...

  4. #4
    Join Date
    Nov 2011
    Location
    Lahore
    Posts
    1,335
    Rep Power
    1562

    Default

    Amli tor pa jahan Farhad Ali Taimor ka kirdaar usky bety Paras Ali Taimor aur Ali taimoor ly laity han wahan is novel ka main The End Kr daita hun.
    Is kahani k kirdaarun ma Sonia ka kirdar behtreen tha. .ISKY K ILAWA RASWANTI BHI BEHTREN KIRDAR THI.
    MIKE HARARY JO CHESS KA MASTER KHILADI THA WO IZAFA MUJHE BOHAT PASAND AYA.
    SHETAARA AUR PARAS ALI KI CHEMISTRY BHE LAJAWAB THI.
    AB NOVL CHOR TO DIA HA lakn TASHNAGI zaror rehti ha.

  5. #5
    Join Date
    Oct 2010
    Age
    27
    Posts
    872
    Rep Power
    469

    Default

    Quote Originally Posted by Pia_gee View Post
    Amli tor pa jahan Farhad Ali Taimor ka kirdaar usky bety Paras Ali Taimor aur Ali taimoor ly laity han wahan is novel ka main The End Kr daita hun.
    Is kahani k kirdaarun ma Sonia ka kirdar behtreen tha. .ISKY K ILAWA RASWANTI BHI BEHTREN KIRDAR THI.
    MIKE HARARY JO CHESS KA MASTER KHILADI THA WO IZAFA MUJHE BOHAT PASAND AYA.
    SHETAARA AUR PARAS ALI KI CHEMISTRY BHE LAJAWAB THI.
    AB NOVL CHOR TO DIA HA lakn TASHNAGI zaror rehti ha.



    آپ کی بات بہت حد تک درست ہے کہ جب عملی طور پر پارس میدان ِ عمل میں آیا تب وہ چاشنی نہیں رہی۔


    سونیا اور رسونتی کے درمیان چپقلش پڑھنے کے لائق تھی ۔۔۔ مرجانہ کا کردار بھی بہت قابل تعریف تھا ۔۔۔
    مجھے ایک اور کردار بہت پسند تھا اس دانتان میں ۔۔۔ وہ ایک زہریلی لڑکی کا کردار تھا ۔۔۔ اسکا نام مجھے یاد نہیں مگر وہ بہت اچھوتا اور پُر کشش کردار تھا ۔۔۔ اس نے فرہاد کو بھی زہریلا کر دیا تھا اور اس کے نتیجے میں بابا صاحب نے کہا تھا کہ اب صرف سونیا ہی فرہاد کے بچوں کی ماں بن سکتی ہے ۔۔۔ اور کوئی نہیں۔


    کہانی تب خراب ہونا شروع ہوئی تھی جب ٹرانسمشن مشین کا عمل دخل بڑھا ۔۔۔ تب تو بالکل بھی انٹرسٹ نہیں رہا کہانی میں ۔۔۔ ہاں مگر جو آخری قسظ تھی وہ بہت اچھی لکھی تھی ۔۔۔ لفاظی اور جذبات کا جو اظہار تھا ۔۔۔ وہ بہت اچھا اور محی الدین سپیشل تھا۔



    آہا ۔۔ کیا خوب داستا ن تھی اور کیا خوب یادیں ہیں ۔۔۔

    _____________________________________________
    GEO MAZAY SAY ...

  6. #6
    Danish ch's Avatar
    Danish ch is offline زندگی نہ ملے گی دوبارہ
    Join Date
    Aug 2015
    Location
    Lahore
    Age
    22
    Posts
    1,469
    Rep Power
    1598

    Default


    بہت ہی کمال کا ناول تھا۔۔
    میں نے بہت کوشش کی کہ ختم کر پاؤں پر نہ ہو سکا مصروفیت آڑے آئی۔
    ماہم نے درست فرمایا۔ درمیان میں کہیں کہیں کہانی کی چاشنی ختم ہو جاتی تھی۔
    لیکن محی الدین نواب صاحب کو قارئین کے دلوں سے کھیلنا خوب آتا ہے۔۔ وہ فوراً کوئی سسپنس شروع کر دیتے۔۔
    اگر کسی کے پاس لامحدود فراغت ہو تو ضرور پڑھے۔۔
    اور تھریڈ سٹاررٹر کا شکریہ۔۔ اس پوسٹ کیلئے۔

    اور مجھے حیرت بھی ہوئی کہ اتنے لوگوں نے یہ ناول پرھ بھی رکھا ہے۔۔
    اسے پڑھ کر مجھ میں بھی شوق پیدا ہوا کہ ٹیلی پیتھی سیکھوں پر وہ کہتے ہیں نہ کہ

    ہزاروں خواہشیں ایسی کہ ہر خواہش پہ دم نکلے۔۔


  7. #7
    Join Date
    Oct 2015
    Posts
    84
    Rep Power
    11

    Default

    bohat sukriya yeh noval me ne kafi bar parha hai mukhtqalif parts me per mukamal na parh paya masroofiyat aray agyii ... ... thanks for sharing

  8. #8
    Join Date
    Oct 2008
    Posts
    9
    Rep Power
    121

    Default

    Her name was Manjhali

Tags for this Thread

Bookmarks

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •